• Qur'an

    In Qur'an section, we will upload translations of Qu'an in different languages. The best Urdu translation of Qur'an is "Kanzul Iman", Alhamdulillah it has been translated in many languages of the world. In this section you can also read online the great Tafaseer (Commentary) of Qu'ran, including TAFSEER-E-NAEEMI and others.

    more »

     
  • Hadith

    In Hadith section, you will be able to read online the different collections of Hadith, translation and commentary on Hadith (Sharha). We will try to upload upload Hadith with Urdu translations and Urdu Sharha of Hadiths, in scanned and unicode format, In Sha Allah.

    more »

     
  • Fiqh

    Fiqh section contains big collection of Fatawa written by Sunni Ulema (Scholars of Islam). Alhamdulillah most of the fatawa collections are brought online for the first time. You can find solution of any issue as per the guidance of Qur'an and Sunnah. It includes, Fatawa Ridawiyyah, Fatawa Amjadiyyah, Fatawa Mustafviyyah and a lot more.

    more »

     
  • Dedication

    This website is particularly dedicated to the Revivalist of Islam in the 14th century, i.e. Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi Alaihir Rahmah. We want to bring online the uttermost research work being carried out over his personality and works around the globe. For further details visit "Works on Alahazrat" Section

    more »

     
  • Books of Alahazrat

    Books written by Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi contain extensive research on various branches of Islamic arts & sciences. This website gives you an opportunity to explore this hidden treasure. You can dip into this sea of knowledge by visiting this section

    more »

     
  • Fatawa Ridawiyyah

    Fatawa Ridawiyyah is one of the greatest writtings of Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi. The new translated version of this historical Fatawa consists of 30 volumes and more than 21000 pages. Reading this fatawa with care and memorizing the principles mentioned therein, can take the reader to a big height in Islamic Jurisprudence.

    more »

     
  • Sunni Library

    - Sunni Library is a collection of core Islamic Literature. You can read online the great work and contribution of Sunni Islamic scholars worldwide in general and by the Scholars of Sub Continent in particular.

    more »

     
Login
Username:

Password:

Remember me



Lost Password?

Register now!
Main Menu
Themes

(2 themes)
(1) 2 3 4 »
Published by Admin2 on 2013/12/16 (739 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ جو شخص کبھی نماز پڑھے اور کبھی نہ پڑھے اُس کا جنازہ کرنا جائز ہے یا نہیں؟ اور بے نمازی کے لڑکے نابالغ کا جنازہ جائز ہے یا نہیں؟
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (822 )
"(۱) جس وقت آدمی علیل ناقابلِ صحت مثلاً مدقوق ہوجائے ، اُمید زیست نہ رہے تو اس کو شرعاً کیا کرنا چاہئے ؟اورعزیز واقارب کو کیا کرنا چاہئے ؟
(۲) جنازے اٹھانے میں کس طرف سے سبقت کی جائے؟
"
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/14 (1882 )
"مع فتوائےعبدالحکیم پٹنوی کہ وقتِ مرگ صرفلا الٰہ الّااﷲکہے کہ رسول اﷲ صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم نے فرمایا ہے: مرنے والوں کولا الٰہ الّا اﷲکی تلقین کرومحمد رسول اﷲملانے کو نہیں فرمایا اور فرمایا۔جس کا پچھلا کلاملا الٰہ الّا اﷲہوتو وہ جنّت میں گیا، یہاں بھیمحمد رسول اﷲنہیں فرمایا، تو اگرلا الٰہ الّا اﷲکے بعدمحمد رسول اﷲکا لفظ بڑھایا جائے تورسول اﷲ صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم کے حکم کے خلاف ہونے کے سبب بُرا اور منع ہو۔المجیب عبدالحکیم صادق پوری۔
اس کے رَد میں مولٰنا عبدالواحد صاحب مجددی رام پوری کا رسالہ''وثیقہ بہشت '' اس ساتھ تھا، تحریر فقیر بر''وثیقہ بہشت''۔
"
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (702 )
"(۱) میّت کے پاس زمین پر بیٹھنا افضل ہے،چارپائی پر کیا منع ہے؟
(۲) میّت والے کے یہاں کیا روٹی پکانا منع ہے؟
"
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (611 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ میّت کو نہلانے کے لئے جو تختے پر لٹائیں تو شرقاً غرباً لٹائیں کہ پاؤں قبلے کو ہوں، یا جنوباً شمالہً کہ دہنی کروٹ قبلہ کو ہو۔بینوا تو جروا۔
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (790 )
کاٹنا مرد کے بال مرنے کے بعد جائز ہے یا نہیں؟
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (1166 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ عورت مر جائے تو شوہر کواسے غسل دینا جائز ہے یا نہیں؟بینواتوجروا۔
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (700 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ حالتِ زندگی میں خاوند اپنی بی بی کا ولی ہوتا ہے مانند ماں باپ کے یا نہیں؟ جو ہوتا ہے تو بعد موت کے ولایت قائم رہتی ہے یا نہیں؟ اگر رہتی ہے تو ہاتھ لگانا ،منہ دیکھنا، اجازت نماز کی دینا جائز ہے یا نہیں؟ اور نکاح رہتا ہے یا نہیں؟ اور ایک صاحب فرماتے ہیں کہ بعد وفاتِ فاطمہ صدیقہ رضی اﷲ تعالٰی عنہا کے حضرت علی کرم اﷲ وجہہ ،نے اپنے ہاتھ سے غسل دیا، اگر یہ بات حق ہے تو ہم لوگ بھی اپنی عورتوں کو غسل دیں تو جائز ہے یا نہیں؟ بینواتوجروا۔
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (871 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ ایک صاحب نے رو برو یہ مسئلہ بیان کیا کہ اگر کسی شخص کی عورت یا عورت کے شوہر کا انتقال ہوجائے تو شوہر عورت کو اور عورت شوہر کو غسل نہیں دے سکتی ہیں،غسل کیا معنی بلکہ چھو نہیں سکتے ہیں خواہ غسل دینے والے موجود ہوں یا نہ ہوں،کیونکہ نکاح دنیا تک ہے جب دو۲ میں سے کسی کا انتقال ہوگیا نکاح فسخ ہوگیا۔جب نکاح فسخ ہوگیا تو عورت مرد کو اور مرد عورت کو نہیں چھو سکتا ہے اُس پر چھونا حرام ہوگیا، آیا ایسا ہوسکتا ہے؟مکلف ہوں کہ بہت جلد جواب سے سرفراز فرمایا جاؤں ۔بینوا توجروا
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (782 )
مدرسہ دیوبند سے ایک رسالہ مشہور کیا گیا ہے جس میں یہ مسئلہ تحریر ہے مرد حالتِ جنابت میں یا عورت حیض کی حالت میں مر جائے توا س کے حلق سے کوئی کپڑا تر کرکے تین مرتبہ حلق صاف کیا جائے اور ناک میں اُس کی پانی ڈالا جائے ۔آیا یہ مسئلہ درست ہے یا نا درست؟
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (672 )
"(۱) کوئی سنّی اگر ناپاکی کی حالت میں فوت ہوجائے اُسے ایک غسل دیا جائے گا یا دو۲؟ اورساری ناک میں پانی اور غرارہ کیونکر کیا جائے گا
(۲) بعد نہلانے کے میّت کے پانی یا دوا یا پاخانہ مُنہ یا پاخانہ کی جگہ سے نکلے تو غسل دوبارہ دیا جائے گا یا جگہ پاک کی جائے گی؟
(۳) میّت نہلاتے وقت کس طرح سر پیر ہونا بہتر ہے؟
"
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (667 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ گھڑے بدھنے میّت کو غسل دینے کے بعد پھوڑ ڈالنا جائز ہے یا نہیں؟ بینواتوجروا
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (707 )
اکثر دیہات میں میّت نہلانے کے واسطے جو گھڑا باندھنا صَرف میں لایا جاتا ہے اس کو قبر کے اوپر سرہانے یا پائنتی رکھ آتے ہیں، اور بعض جگہ غسلِ میّت وہ گھڑا بدھنا مسجد میں رکھ آتے ہیں اس خیال سے کہ نمازیوں کے وضو وغیرہ کے صرف میں آئے تو اچھا ہے،امید ہے کہ اس کا جواب جو بہتر اورموافقِ شرع ہو اس سے مطلع کیا جائے۔
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (1553 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ مردکو کفن کے(کتنے) پارچے کا دینا چاہئے اور عورت کو کَے(کتنے) پارچے کا چاہئے ؟ اور میّت نابالغ کو کتنا کفن دینا لازم ہے؟ ۔ بینواتوجروا
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (826 )
یہاں میت ہوگئی تھی اُس کے کفنانے کے بعد پھولوں کی چادر ڈالی گئی، اس کو ایک پیش امام افغانی نے اتار ڈالا اور کہا یہ بدعت ہے ہم نہ ڈالنے دیں گے۔ دوسرے جو غلاف کا پارچہ سیاہ کعبہ شریف سے لاتے ہیں وہ ٹکڑا ڈالا ہُواتھا اسے ہٹادیا اورکہایہ روافض کا رواج ہے ہم نہ ڈالیں گے اسے الگ ہٹاکے اس نے نماز جنازہ پڑھائی۔
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (687 )
کیافرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ جنازہ لے کر چلیں تو سرہانہ آگے کریں یا پائینتی؟ ایک شخص کہتا ہے کہ پائینتی آگے کرنے کاحکم ہے میں نے علمائے دین سے پوچھ لیا ہے۔اور قبر پر اذان کہنے کو ایک شخص حرام وناجائز کہتا ہے اس میں کیا حکم ہے؟ بینوا توجروا۔
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (647 )
کیافرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں یہاں رواج ہے کہ شخص میت کو بعد تغسیل وتکفین کے جنازے میں رکھتے ہیں، اور جنازہ کی چھتری پر غلاف ڈال کے مُردے کے واسطے شال اور عورت کے واسطے دامنی ڈالا کرتے ہیں اورپھر اس شال یا دامنی کو پھولوں کی ایک چادر بنا کر ڈالتے ہیں تو آیا یہ امر واسطے مرد کے کرنا شرعاً جائز ہے یانہیں؟ بینواتوجروا
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (652 )
تما م لوگ بوجہ رسم کے بالوجہ اس امر کے ملّا صاحب فرماتے ہیں ہم نہیں آئیں گے، ریشمی کپڑا یارنگ برنگ کی چادریں میت پر ڈالتے ہیں اور جب اُن سے کہا جاتا ہے تو کہتے ہیں تم لوگ ہم پر حسد کرتے ہو، مجبوراً ڈلوانا کہاں تک جائز ہے؟
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (660 )
اگر عورت مر جائے تو شوہر اس کے جنازے کو ہاتھ لگائے یا نہیں؟
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (652 )
زوجہ کا جنازہ شوہر کو چھونا کیسا ہے؟ چھونا چاہئے یا نہیں؟ شوہر کا اپنی زوجہ کا منہ قبر میں رکھنے کے بعددیکھنا کیسا ہے ،چاہئے یا نہیں؟
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/6 (705 )
ہندوستان کے لوگوں کا دستور ہے کہ جب عورت کی حالتِ نزع ہوتی ہے تب اُس کے شوہر کو اُس کے پاس نہیں جانے دیتے اور اس کا شوہر حالتِ نزع میں اُس کے پاس نہیں جاتا اُس عورت کی تکفین وتدفین میں بھی شوہر کو شریک نہیں کرتے اور کہتے ہیں اب اس کا رشتہ ٹوٹ گیا، آیا یہ فعل ان کا جائز ہے یا ناجائز؟ بینواتوجروا
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/14 (1199 )
"مسئلہ نمبر ۲۳: ازپنجاب ضلع جہلم ڈاکخانہ وریلوے اسٹیشن ترقی موضع غازی ناڑہ مرسلہ محمد مجید الحسن صاحب۔ ۵ ذی القعدہ ۱۳۳۹ھ
مشہور خدمت جناب صاحب حجتِ قاہرہ مجددِ ماتہ حاضرہ مولٰنا مولوی احمد رضاخان صاحب دام ظلمکم علٰی راس المستر شدین بعد سلام سنتہ الاسلام عرض ہے کہ اس ملک میں جنازہ کے آگے مولود خوانی میں اختلاف اور جھگڑا ہے ایک طائفہ بحرالرائق ومراقی الفلاح و قاضی خان و عالمگیری وغیرہا کی عبارات سے مکروہ تحریمی کہتے ہیں، اوردوسری جماعت جائز و مستحب کہتی ہے، آپ کی تحریر پر جملہ مسلمانوں کا فیصلہ ہے کئی ماہ کے تنازع کا فیصلہ ہوگا۔ عبارات فریق قائل کراہت ۔ردالمحتار :قیل تحریما وقیل تنزیھا کمافی البحرعن الغایۃ وفیہ عنھا وینبغی لمن تبع الجنازۃ ان یطیل الصمت وفیہ عن الظھیریۃ فان ارادان یذکراﷲتعالٰی یذکرفی نفسہ لقولہ تعالٰی انہ لایحب المعتدین ای الجاھرین بالدعاء قلت اذاکان ھذافی الدعاء والذکر فماظنک بالغناء الحادث فی ھذاالزمان ۱؎ ۔کہا گیا کہ مکروہِ تحریمی ہے اور کہاگیا کہ تنزیہی جیساکہ بحر میں غایہ سے منقول ہے، اور اُس میں اسی سے یہ بھی ہے : جنازہ کے پیچھے چلنے والے کو برابر سکوت رکھنا چاہئے ،اور اسی میں ظہیریہ سے ہے : اگر اﷲ تعالٰی کا ذکر کرنا چاہے تو دل میں کرے اس لئے کہ باری تعالٰی کا ارشاد ہے : وُہ حد سے بڑھنے والوں کو پسند نہیں فرماتا--یعنی دُعامیں جہر کرنے والوں کو-- میں کہتاہوں یہ جب دعاوذکر کا حکم ہے تواُس نغمہ اور گانے کا کیا حال ہوگا جواس زمانے کی پیداوار ہے--
(۱؎ ردالمحتار باب صلٰوۃ الجنائز مطبوعہ ادارۃ الطباعۃ المصریہ مصر ۱ /۵۹۸)
بحرالرائق ینبغی لمن تبع الجنازۃ ان یطیل الصمت ویکرہ رفع الصوات بالذکر وقراءۃ القراٰن ۱؂ الخالبحرالرائق میں ہے جنازہ کے پیچھے چلنے والے کو طول سکوت اختیار کرنا چاہئے اور بلند آواز سے ذکر وتلاوت قرآن مکروہ ہے الخ(ت)
(۱؎ بحرالرائق کتاب الجنائز فصل السلطان احق بصلٰوتہ مطبوعہ ایچ ایم سعید کمپنی کراچی ۲ /۱۹۲)
عبارت فریق قائل بحلت عن ابن عمر رضی اﷲتعالٰی عنہما لم یکن یسمع من رسول اﷲصلی اﷲتعالٰی علیہ وسلم وھو یمشی خلف الجنازۃ الاقول لا الٰہ الااﷲ اخرجہ ابن عدی فی ترجمۃ ف براہیم بن ابی حمید وضعفہ، تخریج احادیث الھدایۃ لابن حجر۲؎ ۔حضرت ابن عمر رضی اﷲ تعالٰی عنہ سے مروی ہے: جب رسول اﷲ صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم جنازہ کے پیچھے چلتے تو حضورسے کلمہ لا الٰہ الااﷲکے سوا کچھ نہ سُنا جاتا --ابن عدی نے ابراہیم بن ابی حمید کے حالات میں اس کی تخریج کی ہے اور اسے ضعیف کہا ہے ۔تخریج احادیث ہدایہ ازعلامہ ابن حجر (ت)یعنی اس سے ادنٰی جہر ثابت ہوتا ہے وغیرہ ۔ بینواتوجروا
(۲؎ الکامل فی ضعفاء الرجال ترجمہ ابراہیم بن احمد کے تحت مطبوعہ دارالفکر بیروت ۱/۲۶۹
صحیح بخاری کتاب الحیض مطبوعہ قدیمی کتب خانہ کراچی ۱/۴۴)
ف:ھو ابراھیم بن احمد الحرانی الضریر،انظر حاشیۃ نصب الرایۃ ۲/ ۲۹۲
ابراہیم الحرانی ھوابن ابی حمید متہم بوضع الحدیث، انظر اللسان ۱/۲۸ نذیر احمد سعیدی
"
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/14 (1394 )
"ہمارے یہاں شہر احمد آباد میں جنازہ کے ہمراہ کلمہ طیّب کا ذکر احبابِ اہلسنّت درمیانی آواز سے کرتے ہیں اسے بعض مکروِ تحریمی و تنزیہی کہتے ہیں ان کی تردید میں علمائے اہلسنّت نے چار۴ رسالے تصنیف کرکے شائع کئے ہیں اور وُہ اہل حق کے پاس موجود ہیں، الحمدﷲ علٰی ذلک، اب ضرورت اس مسئلہ کی اہلسنّت کو ہے، حضرت خواجہ بہاءالدین نقشبند قدس سرہ العزیز نے اپنے جنازہ میں فارسی کے اشعار اور حضرت شاہ غلام علی صاحب دہلوی رحمۃ اﷲ علیہ نے اپنے جنازہ میں عربی اشعار پڑھنے کی مریدوں کو وصیّت کی---
مقاماتِ مظہریہ ص ۱۵۷ میں ہے :می فرمودند کہ حضرت خواجہ بہاءالدین نقشبند رحمۃ اﷲ علیہ فرمودند کہ فاتحہ خواندن پیشِ جنازہ ماوکلمہ طیب و آیت شریفہ بے ادبی است ایں دو۲ بیت بخوایندہ : ؎فرماتے ہیں کہ حضرت خواجہ بہاء الدین نقشبند رحمۃ اﷲ علیہ نے فرمایا: ہمارے جنازہ کےسامنے فاتحہ ،کلمہ طیب اورآیت شریفہ پڑھنا بے ادبی ہے یہ دو شعر پڑھنا: (۱) مفلسا نیم آمدہ در کوئےتو شیئاﷲ ازجمال روئے تو (۱) ہم مفلس آپ کی گلی میں آئے ہیں، خداکے لئے اپنے جمالِ رُخ کا کچھ صدقہ عطا ہو۔ (۲) دست بکشا جانبِ زنبیل ما آفرین بردست و بر پہلوئے تو (۲) ہماری جھولی کی طرف ہاتھ بڑھائیں ، آپ کے ہاتھ اور آپ کے پہلو پر آفرین ہو۔من ہم میگویم پیش جنازہ من ہمیں اشعار بخدانند: ؎میں بھی کہتاہوں میرے جنازہ کے سامنے یہی اشعار پڑھنا: (۱) وقدت علی الکریم بغیر زاد
من حسنات والقلب السلیم
(۲)فحملی الزاداقبح کل شیئ
اذاکان الوفود علی الکریم ۱؎ (۱) کریم کے دربار میں قلبِ سلیم اور نیکیوں کا کوئی توشہ لئے بغیر جارہا ہوں۔
(۲) کہ جب کسی کریم کے دربار میں حاضری ہو تو توشہ لے کر جانا بہت بُری بات ہے۔(ت)
(۱؎ مقاماتِ مظہریہ)
حضرت شاہ غلام علی دہلوی قدس سرہ العزیز مولانا خالد کردی کے مرشد برحق ہیں ضمیمہ مقاماتِ مظہریہ کے ص۲۹ میں مولانا خالد کردی اپنے قصیدہ میں فرماتے ہیں: ؎ (۱) وانالنی اعلی الماٰرب والمعنی
اعنی لقاء المرشد المفضالٖ (۱) مجھے سب سے بلند مقصد وآزرو عطافرمائی۔ یعنی بڑے فضل وکرم والے مرشد کی صحبت نصیب کی۔ (۲) من نور الآفاق بعد ظلامھا
وھدی جمیع الخلق بعدضلالٖ (۲) وہ جس نے تاریک آفاق روشن کردئے اور ساری گمراہ مخلوق کو ہدایت فرمائی۔ (۳) اعنی غلام علی القرم الذی
من لحظہ یحیی الرمیم البالی ۲؎ (۳) یعنی وُہ سردار عظیم غلام علی جس کی نظر سے بوسیدہ ہڈیوں میں جان پڑجاتی ہے۔
(۲؎ ضمیمہ مقاماتِ مظہریہ)
اور یہ مولانا خالد کروی علامہ شامی کے مرشد ہیں، اس کا ثبوت ردالمحتار جلد ۲صفحہ ۴۵۲ کی اس عبارت سے ہے:وقد بسطنا الکلام فی رسالتنا سل الحسام الہندی لنصرۃ سیدنا خالد النقشبدی۱ ؎۔اور ہم نے اپنے رسالہ''سل الحسام الہندی لنصرۃ سیدنا خالد النقشبندی ــ''میں تفصیل سے کلام کیا ہے۔(ت)
(۱؎ ردالمحتار کتاب النکاح قبیل فصل فی المحرمات ادارۃ الطباعۃ المصریۃ مصر ۲ /۲۷۶)
علامہ شامی کے دادا مرشد کے جنازہ میں عربی اشعار اور حضرت خواجہ بہاءالدین نقشبند رحمہ اﷲ تعالٰی کے جنازہ میں فارسی اشعار پڑھے گئے، ان اشعار کا پڑھنا جائز ہے یا نہیں؟ جائز ہے تو دلائل کیا ہیں؟ جو مکروہ تحریمی کہتے ہیں وہ علامہ شامی کی ردالمحتار ج۱ ص ۹۳۲ کے اس قول کو پیش کرتے ہیں : (قولہ کماکرہ الخ) قیل تحریما وقیل تنزیھا کما فی البحرعن الغایۃ وفیہ عنہا و ینبغی لمن تبع الجنازۃ ان یطیل الصمت وفیہ عن الظہیریۃ فان ارادان یذکراﷲتعالٰی یذکرہ فی نفسہ لقولہ تعالٰی انہ لایحب المعتدین ای الجاھرین بالدعاء وعن ابراہیم انہ کان یکرہ اذیقول الرجل وھویمشی معھا استغفروالہ غفراﷲلکم اھ قلت واذاکان ھذافی الدعاء والذکر فماظنک بالغناء الحدث فی ھذا الزمان۲؎۔ (جیسا کہ مکروہ ہے) کہا گیا تحریمی، اور کہا گیا تنزیہی ، جیسا کہ بحر میں غایہ کے حوالے سے ہے اوراسی میں اس کے حوالے سے یہ بھی ہے:جنازہ کے ساتھ چلنے والے کو طول سکوت اختیار کرنا چاہئے، اور اس میں ظہیریہ کے حوالے سے ہے۔ اگر اﷲ کا ذکر کرنا چاہے تو آہستہ کرے اس لئے کہ ارشادِ باری ہے : بے شک وُہ حد سے بڑھنے والوں کو پسند نہیں فرماتا۔یعنی وُہ جو بلند آواز سے دُعا کرتے ہیں--حضرت ابراہیم نخعی سے مروی ہے کہ جب وُہ جنازے کے ساتھ چلتے اور کوئی بولتا'' اس کےلئے استغفار کر و خداتمہاری مغفرت فرمائے'' توا نہیں ناگوار ہوتا اھ میں کہتاہوں جب دُعا وذکر کا یہ حکم ہے تو اس نغمہ زنی کے بارے میں تمہارا کیاخیال ہے جو اس زمانے میں پیدا ہوگئی ہے۔(ت)
(۲؎ ردالمحتار باب صلٰوۃ الجنائز مطبوعہ ادارۃ الطباعۃ المصریہ مصر ۱ /۵۹۸)
اس عبارت سے حضرت شاہ غلام علی وخواجہ بہاءالدین قدس سرہما نے جو فارسی و عربی کے اشعار اپنے جنازوں میں پڑھوائے اُن کی کراہت ثابت ہوتی ہے یا نہیں اور عدم کراہت و جواز اُن اشعارکی کیا وجہ ہے اور غناء حادثات کی کراہت کی کیا وجہ ہے، دونوں کا حکم بیان فرمائیں ، اور یہاں جنازہ کے ہمراہ یہ اشعار اردو کے بھی حضرات خوش الحانی سے پڑھتے ہیں اس اشعار کو پڑھیں یا نہیں
یا پنجتن بچانا جب جان تن سے نکلے نکلے تو یامحمد کہہ کر بدن سے نکلے
آوے گا میرا پیارا باجےگی دھن کی مُرلی جب وُہ مِرا سنوریاجوبن کے بن سے نکلے
میرے مریضِ دل کی امید ہے تویہ ہے زانو پہ اُس کے سر ہو اور جان تن سے نکلے
نکلے جنازہ میرا اُس یار کی گلی سے تو کلمہ شہادت سب کے دہن سے نکلے
کیا لایا تھا سکندر دنیا سے لے گیا کیا تھے دونوں ہاتھ خالی باہر کفن سے نکلے"
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/14 (747 )
جنازہ کے ہمراہ بلند آواز سے کلمہ طیّبہ یا وظیفہ غوثیہیا شیخ عبدالقادر جیلانی شیئٍاﷲپڑھتے چلنا درست ہے یا نہیں؟
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (813 )
بعض جگہ دیکھا گیا ہے کہ جنازہ کے ساتھ غزلیں نعتیہ پڑھتے جاتی ہیں اس کی نسبت کیا حکم ہے؟
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (1173 )
(ہمارے علمائے کرام رحمہم اﷲ کیا فرماتے ہیں۔ت) ایک حنفی عالم کہتا ہے کہ بے نمازی کافر و مرتد ہے اس پر نمازِ جنازہ پڑھنا جائز نہیں اور اس کو مسلمانوں کے قبرستان میں دفن نہ کرنا چاہئے۔ اس عالم کا قول مردود ہے یا نہیں؟ تین شخصوں کے بے نمازِ جنازہ دفن کرادیا ہے اس پر شرعاً کیا وعید عاءد ہوسکتی ہے؟ دُنیا میں ایسا مسلمان نہیں جو گاہ بگاہ پنجگانہ و عید نہ پڑھتا ہو ۔
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (821 )
بے نمازی کی نمازِ جنازہ چاہئے یا نہیں۔اگر چاہئے تو کیا دلیل، جواب بالتفصیل بحوالہ کتبِ معتبرہ تحریر فرمائے ۔بینواتوجروا
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (673 )
زید تمام ضروریاتِ دین کو تسلیم کرتا ہے کسی ایک کے انکار کو کفر جانتا ہے محض سستی وغفلت سے بے نماز ہے۔ پس ایسے بے نمازوں کے جنازے کی نماز ناجائز ہے یا نہیں؟ کوئی نہ پڑھے نہ پڑھائے؟
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (736 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ جو شخص کبھی نماز پڑھے اور کبھی نہ پڑھے اُس کا جنازہ کرنا جائز ہے یا نہیں؟ اور بے نمازی کے لڑکے نابالغ کا جنازہ جائز ہے یا نہیں؟
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (1020 )
کیافرماتے ہیں علمائے دین ومفتیانِ شرح متین اس مسئلہ میں کہ ایک طالب علم موضع فرید پور میں مولوی یٰسین کا شاگرد وہاں کی مسجد میں مقیم ہے اور وُہ یہ کہتا ہے کہ بے نمازی کے جنازے کی نماز پڑھنا جائز نہیں ہے، اور قبر پر اذان دینا جائز نہیں ہے، اور فاتحہ وغیرہ اور گیارھویں شریف کی نیاز کرنا جائز نہیں ہے، اور یہاں پر سب گاؤں کے مسلمانوں کو گمراہ کئے دیتاہے، لہذا یہ باتیں تحریر کردیں جائز ہیں یا نہیں، بموجب شرع شریف کے جواب سے مشرف فرمائیے گا۔ بینواتوجروا۔
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (659 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ زید مرگیابکر نے کہا زید نماز نہیں پڑھتا تھا اُس کے جنازہ کی نماز نہ پڑھی جائے مگر اس شرط پر کہ اس کو کھنچوانا چاہئے ، پھر زید کو بیلوں سے پاؤں باندھ کر کھنچوایا ۔ یہ بات قرآن وحدیث سے درست ہے یا نہیں ؟ اور اگر نہیں توبکر پر کیا حکم ہے؟ فرمائیے کتاب اور حدیث رسول سے۔
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (582 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ ایک مسلمان نے نو مسلم عورت سے عقد کیا تھا، دو۲ برس کے بعد ۲۹رمضان ۱۳۳۹ھ کو دنیائے فانی سے ملک عدم کو رخصت ہوئی۔ اس مسلمان کا یہاں کوئی وارث اور نہ تھا اس نے مسلمانوں کو اطلاع دی، انہوں نے جواب دیا ہم تمہاری عورت کا جنازہ نہیں اُٹھائیں گے نہ قبرستان میں جگہ دیں گے کیونکہ تم نماز نہیں پڑھتے ہو اور مسجد کمیٹی وخلافت کمیٹی وغیرہ میں چندہ بھی نہیں دیتے کبھی ہماری کمیٹیوں میں شرکت نہیں کرتے ، لہذا تم اور کوئی انتظام کرو۔اس شخص نے جواب دیا اگر میراعذر قابلِ اعتماد ہو تو مجھ کو معافی دیجئے جو سزا میرے لئے آپ لوگ قرار دیں قبول کرتا ہوں۔ اگر میرا قصور ہے تو مجھے سزا دیں اور معافی دے کر میّت کو اٹھائیں۔ ان لوگوں نے مطلق انکار کردیا جو خلافت کمیٹی کے ممبران و سیکریٹری وپرزیڈنٹ ہیں۔ تب اُس نے ہندو سے التجا کی، اسکی بیکسی بے بسی دیکھ کر ہنود اس محلہ میں آئے اور مسلمانوں کو سمجھایا، بمشکل تمام راضی ہوئے مگر غسل دینے والی عورت کو روک دیا۔ مجبوراً اس نے اپنے ہاتھ سے غسل دیا اور کفن پہنایا۔ بعد اس کے چار پانچ مسلمان،انہوں نے کہا ہم تم پر آٹھ روپیہ جُرمانہ کرتے ہیں،اگر منظور ہو تو ہم میّت اُٹھائیں ورنہ ہم اپنے اپنے گھر جاتے ہیں۔وُہ چونکہ مصیبت زدہ تھا راضی ہوا۔ غرض صبح آٹھ بجے کی میت بارہ ۱۲ بجے شب اُٹھائی گئی۔اب عرض ہے کہ آیا حدیث شریف میں یہی فرمان ہے اور خدا اور اسکے رسول کا یہی حکم ہے تو مجھے مطلع فرمائیں،اور اگر یہ حرکت مطابقِ شرع نہ ہو توان کی کیا سزا شرعاً و قانوناً ؟بینواتوجروا
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (652 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین کہ زید مسلمان حنفی،بکرنصرانی کے یہاں ملازم تھا اوراس کا جھوٹا کھالیا کرتاتھا، مسلمانوں نے اُس سے منع کیا، حتی کہ بکر نے بھی، مگر زید باز نہ آیا اور اس کے مرنے پر جمیع مسلمانوں نے اس کی تجہیز وتکفین ونمازِ جنازہ سے انکار کیا، بالآخر چند مسلمانوں نے نمازِ جنازہ پڑھ کر دفن کیا، اگرایسا موقع آئندہ آئے تو کیا کرنا چاہئے ؟بینواتوجروا۔زید کے گھر والوں کے ساتھ کیا برتاؤ کرنا چاہئے کیونکہ زید کے یہاں کا کھانا وغیرہ بند کردیا گیا ہے۔
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (675 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین ومفتیان شرع متین اس مسئلہ میں کہ ایک شخص اہلِ اسلام سے آخر عمر تکتارک صلٰوۃ والصیام ومشارب الخمر باللیل والایام ملحق دین نصارٰیرہا حتی کہ بہ تحقیق بدون توبہ ڈاک بنگلہ پر منتقل ہُوا، پھر ورثاء اس کے مکان پر لائے، معاذاﷲ اور بخوف عدم شرکتِ دفن اہل اسلام کے ایک حجام اور خرادی اور کنجڑا پرورش یافتہ خود کو مصنوعی شاہد مقرر کرکے توبہ پر اس میت کی قائم کئے۔عیاذاً باﷲ۔تب جنازہ اُٹھا اور ہمراہ جنازہ کے عیسائی بھی تھے۔ تب بھی چند کس نے دیدہ وادانستہ نمازِ جنازہ پڑھی اوراسقاط لے کر قبر پر قرآن پڑھا۔بعد دخول قبر عیسائیوں نے ٹوپی اتار کر سلامی لی، پس مسلمانوں کو بحکم شرع میت کے اسلام پر خدشہ صادقہ تھا اور یقین کامل ہوا، اور بحمیت اسلامی اُن سے رَوکش ہوئے کہ اوروں کو عبرت ہو، کیونکہ بعملداری ہنود اور تعزیر غیر ممکن، اس خیال سے اُن لوگوں سے مرتدین کا معاملہ کرنا جائز ہے یا نہیں جب تک توبہ نہ کریں اُن کے پیچھے نماز جماعت درست ہے یا ممنوع، اس کے ،حق میں اور اُن کے مشترک کے حق میں شرعاً کیا حکم ہے؟ مشرح بعبارت کتب بیان فرمائیں۔رحمۃ اﷲ علیہم اجمعین۔
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (1122 )
کیافرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ اہل شیعہ کی نمازِ جنازہ پڑھنا اہلسنّت وجماعت کے لئے جائز ہے یا نہیں؟ اور اگر کسی قومِ سنّت والجماعت نے نماز کسی شیعہ کی جنازہ کی پڑھی تو اس کے لئے شرع میں کیا حکم ہے۔
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (829 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین مندرجہ ذیل صُورت میں ایک شخص جو شیعہ اثناء عشری مذہب رکھتا ہے اور کلمہلا الٰہ الاﷲ محمدرسول اﷲ علی خلیفۃ بلا فصل وغیرہ اعتقاداتِ مذہبِ شیعہ کا معتقد ہے فوت ہوا ہے اُس کا جنازہ ہمارے امام حنفی المذہب جامع مسجد مے پڑھایا اوراس کو غسل دیا، نیز اس کے ختم میں شامل ہوا، شیعہ جماعت نے امام مذکور کے نمازِ جنازہ پڑھانے کے بعد دوبارہ شیعہ امام سے متوفی مذکور کی نماز جنازہ پرھائی۔ کیا امام مذکور حنفی المذہب کا یہ فعل ائمہ احناف کے نزدیک جائز ہے۔ اگر ناجائز ہے تو کیا امام صاحب مذکور کا یہ فعل شرعاً قابلِ تعزیر ہے اور کیا تعزیر ہونی چاہئے؟
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (823 )
کیافرماتے ہیں علمائے دین اگر ہجڑہ مر جائے اُس پر نمازِ جنازہ پڑھی جائے یا نہیں؟ اور اگر پڑھی جائے تو نیّت مرد کی جائے یا عورت کی؟
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (860 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین کہ نمازِ جنازہ کے لئے امامت میں احق افضل کون ہے؟ کیا امام جامع مسجد یا قاضی اس معنٰی میں نکاح خوانی کرتا ہوا ور لیاقت کچھ نہیں رکھتا، صرف معمولی اردو کی کتابیں دیکھے ہوئے ہو وُہ بلااذن طلب کئے میّت کے ورثاء یا اولیاء سے نمازِ جنازہ پڑھا سکتا ہے؟ اور بموجودگی کئی افضل واعلم بالسنۃ عالم واحق بالامامۃ اُس کا نماز پڑھنا کیسا ہے؟ یہ جو عام طور پر رائج کہ اوّل وارث یا ولی میت سے اذن لیتے ہیں نماز پڑھانے کا یہ کیا کچھ ضروری چیز ہے؟ اور کون امام بلااذن طلب کئے بھی نماز پڑھا سکتا ہے؟ بینواتؤجّروا۔
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (1210 )
ماقولکم رحمکم اﷲتعالٰی اندریں مسئلہ کہ خدیجہ بی بی زوجہ مولوی عبدالحکیم صاحب رحلت نمود درحق صلٰوۃ جنازہ ولی زن شوہرش باشد یا پدرش وبراداران وعمام اومگر پدر وغیرہ اقارب مذکورین جاہلان بے علم اندبخلاف شوہر، نیز از جانب شوہر عم او حافظ عبدالحی امام الحی موجود ست پس ولایتِ نماز دو رصورت مذکورہ ازیناں کراست مخفی مبادکہ ازدو۲ سال علمائے سلہٹ دریں مسئلہ باہم اختلافہا دارند۔ اُمید کہ رفع شک فرمایند۔بینواتوجرواآپ رحمکم اﷲ تعالٰی کا اس مسئلہ میں کیا قول ہے کہ خدیجہ بی بی زوجہ عبدالحکیم صاحب کا انتقال ہوا، نماز جنازہ کے حق میں عورت کا ولی اس کا شوہر ہوگا یاباپ ،بھائی ،چچا؟ مگر باپ وغیرہ اقارب مذکورین جاہل بے علم ہیں، جب کہ شوہر صاحب علم ہے اور شوہر کی جانب سے اس کے چچا حافظ عبدالحمید امامِ محلہ بھی موجود ہیـں، توصورت مذکورہ میں نماز کی ولایت ان میں سے کس کے لئے ہے۔ واضح ہو کہ دو۲ سال سے سلہٹ کے علماء اس مسئلہ میں باہم اختلاف رکھتے ہیں۔امید ہے کہ شک دور فرمائیں گے۔بیان فرمائیں اجر پائیں۔
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (695 )
کیافرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ میّت اگر چہ بالغ ہو یا نابالغ ہو اُس کے جنازہ میں ولی داخل نہیں ہوا تو اس کا جنازہ ہوا یا نہیں :
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (659 )
چے می فرمایند علمائے کرام دریں مسئلہ کہ بوقت نمازِ مغرب جنازہ بیاید تقدیم نمازِ فرض بایدیانمازِ میّت۔اس مسئلہ میں علمائے کرام کیا فرماتے ہیں کہ مغرب کے وقت جنازہ آئے تو پہلے نمازِ فرض کی ادائیگی ہو یا نمازِ جنازہ کی؟
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (537 )
ظہر کی نماز کا وقت ابھی شروع ہُوا پھر جنازہ بھی آیا، اور وقت بہت ہے، اب کون نماز مقدم ہو، اور سنّت کس وقت؟
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (611 )
کیافرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ کھانا تیار ہے جنازہ بھی تیار ہے تو پہلے کھانا کھائے یا مُردے کو دفن کرے؟
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (881 )
کیافرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ ایک جنازہ کی نماز میں کچھ لوگ بلاوضو وبلاتیمم شریک ہوگئے اُن کی نماز ہوئی یا نہیں؟ اور ان کی نسبت کیا حکم ہے؟ اورا یک شخص نے کہا کہ انہوں نے کچھ بُرا نہ کیا کہ نمازِ جنازہ میں صرف امام کی طہارت ضروری ہے مقتدیوں کی طہارت کی حاجت نہیں، اُس کایہ قول کیساہے؟ بینوا توجروا
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (755 )
"کیا فرماتے ہیں علمائے دین ان مسائل میں کہ :
(۱) ایک جنازے کی نماز میں زید نے لوگوں کو جنہوں نے جوتوں میں سے پیروں کو نکال کر اور جُوتے کے اوپرپَیر رکھ کر نماز پڑھنا چاہا، روکاکہ پَیر جوتوں سے مت نکالو جُوتے پہنے ہوئے نماز درست ہے۔ عمرو نے ایک شخصیّت کے الفاظ میں کہا کہ کوئی کہتاہے جوتے پہنے ہوئے نماز پڑھو، جوتے سب اتار ڈالیں۔ چنانچہ بعض نے زید کے کہنے پر عمل کیا بعض نےعمرو کے کہنے پر۔ بعد نماز بحث پیش آئی۔زید نے تحریری جواب میں کہ رسول خدا نے نماز میں جوتا اتارا، مقتدیوں نے بھی اتار ا،پیغمبر صاحب نے دریافت کیا تم نے جوتے کیوں اتارے؟ جواب دیا کہاتباع کیا۔ آپ نے فرمایامجھ سےجبرئیل علیہ السلام نے کہا کہ جوتے میں ناپاکی ہے۔پس معلوم کرلینا چاہئے،عمرو کو ایسا کہنا خلاف تھا اس لئے کہ وہ کیسے برجستہ الفاظ صدر کہہ سکتا تھا اس لئے ناپاکی کا ثبوت نہیں رکھتا تھا، مقامی حالت میں جہاں جوتے اتار کر نماز پڑھنے کے واسطے عمرو نے کہا تھا یہ تھی کہ وہاں گھوڑے وغیرہ پیشاب کرتے ہیں، جوتے پہنئے ہوئے جسقدر لوگ تھے اُن کے جوتے خشک تھے، پس اس حالت میں شرعاً عمرو کا کہنا صحیح سمجھا جائے گا یا زید کا؟
(۲) عمرو مذکور نے ایک مرتبہ ایسا بھی کیا کہ نمازِ جنازہ دوبار پڑھائی، زید نے اس کو مکروہ کہا، اور جب عمرو کی جانب سے لوگوں نے بحث کی تواُس نےعلاوہ مکروہ کے آثارِ فتنہ اوربدعت بھی ثابت کیا ، کیا زید کا کہنا حق ہے؟

"
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (629 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین ومفتیان شرع متین اس مسئلہ میں کہ نمازِ جنازہ اس طرح ادا کرنا کہ میّت چارپائی پر ہو اور چارپائی کے پائے ایک ہاتھ سے زائد بلند ہوں جائز ہے یا نہیں؟ اگر جائز ہے تو کس دلیل سے جائز ہے؟ بینواتوجروا۔
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (621 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ زید کہتا ہے کہ اگر جنازہ کو ایسی چارپائی پر رکھ کر نماز پڑھی کہ جس کے پائے ایک بالشت سے کم تھے تب تو نماز ہوگئی ورنہ نہیں۔ اور ثبوت میں شامی اورکبیری پیش کرکے کہتا ہے کہ جنازہ مثل امام کے ہے جس طرح امام کا ایک بالشت سے اوپر کھڑا ہونامفسدِ صلٰوۃ ہے اس صورت میں بھی پائے ایک بالشت سے زائد ہونا مانع صلٰوۃ جنازہ ہے۔ کیاواقعی اگر پائے ایک بالشت سے زیادہ ہوں تو مفسدِ صلٰوۃ جنازہ ہیں یا ایک بالشت ہونا اولٰی ۔اور اس سے زائد مکروہ یا مطلقاً خواہ جس قدر بھی پائے لمبے ہوں جائز ہے؟بینواتوجروا۔
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (590 )
نمازِ جنازہ میں امام کے نیچے جانماز ہوتی ہے اور مقتدی سب زمین پر، یہ جائز ہے یا ناجائز؟بینواتوجروا
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (658 )
کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ مُردہ کے نماز پڑھانے کے واسطے جو جا نماز ملتی ہے اس سے کُرتا اور کچھ کپڑا بنانا جائز ہے یا نہیں؟ اور اگر جائز نہیں تو اس سے جونمازِ مفروضہ پڑھی گئی ہووُہ لوٹائی جائے گی یا نہیں؟ اوراس کفن سے یہ جانماز کے واسطے کپڑا نکالنا جائز ہے یا نہیں؟ بینوا توجروا
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

Published by Admin2 on 2013/12/16 (631 )
نماز جنازہ کے وقت امام کے سامنے جو جانماز بچھاتے ہیں یہ جائز ہے یا نہیں؟
فتاویٰ رضويه جلد نہم باب الجنائز
  Print article

(1) 2 3 4 »
RSS Feed
show bar
Quick Menu