• Qur'an

    In Qur'an section, we will upload translations of Qu'an in different languages. The best Urdu translation of Qur'an is "Kanzul Iman", Alhamdulillah it has been translated in many languages of the world. In this section you can also read online the great Tafaseer (Commentary) of Qu'ran, including TAFSEER-E-NAEEMI and others.

    more »

     
  • Hadith

    In Hadith section, you will be able to read online the different collections of Hadith, translation and commentary on Hadith (Sharha). We will try to upload upload Hadith with Urdu translations and Urdu Sharha of Hadiths, in scanned and unicode format, In Sha Allah.

    more »

     
  • Fiqh

    Fiqh section contains big collection of Fatawa written by Sunni Ulema (Scholars of Islam). Alhamdulillah most of the fatawa collections are brought online for the first time. You can find solution of any issue as per the guidance of Qur'an and Sunnah. It includes, Fatawa Ridawiyyah, Fatawa Amjadiyyah, Fatawa Mustafviyyah and a lot more.

    more »

     
  • Dedication

    This website is particularly dedicated to the Revivalist of Islam in the 14th century, i.e. Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi Alaihir Rahmah. We want to bring online the uttermost research work being carried out over his personality and works around the globe. For further details visit "Works on Alahazrat" Section

    more »

     
  • Books of Alahazrat

    Books written by Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi contain extensive research on various branches of Islamic arts & sciences. This website gives you an opportunity to explore this hidden treasure. You can dip into this sea of knowledge by visiting this section

    more »

     
  • Fatawa Ridawiyyah

    Fatawa Ridawiyyah is one of the greatest writtings of Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi. The new translated version of this historical Fatawa consists of 30 volumes and more than 21000 pages. Reading this fatawa with care and memorizing the principles mentioned therein, can take the reader to a big height in Islamic Jurisprudence.

    more »

     
  • Sunni Library

    - Sunni Library is a collection of core Islamic Literature. You can read online the great work and contribution of Sunni Islamic scholars worldwide in general and by the Scholars of Sub Continent in particular.

    more »

     
Login
Username:

Password:

Remember me



Lost Password?

Register now!
Main Menu
Themes

(2 themes)
Fiqh > Q. & Ans. > Taharat / Purity / کتاب الطہارت > دلو وسط کی مقدار کیا ہے

دلو وسط کی مقدار کیا ہے

Published by Admin2 on 2012/3/1 (1992 reads)
Page:
(1) 2 3 »

New Page 1

مسئلہ ۶۷ (عہ) کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ دلو وسط کی مقدار کیا ہے۔ بینوا توجروا۔

(عہ) یہ فتوٰی فتاوٰی قدیمہ کے بقایا سے ہے جو مصنف نے اپنے صغر سن میں لکھے ۱۲ (م)

الجواب:کنویں میں جب کوئی چیز گرجائے اور شرع مطہر کچھ ڈول نکالنے کا حکم دے جہاں متون متاخرین میں لفظ دلو وسط واقع ہوا یعنی مثلاً چوہا گر کر مرجائے تو بیس۲۰ ڈول متوسط نکالے جائیں، اس ڈول کی تعیین میں بھی اقوال مختلفہ ہیں کہ سات۷ تک پہنچتے ہیں مگر ظاہر الروایۃ ومختار(۱) امام قاضی خان وصاحبِ(۲) محیط ومصنف(۳) اختیار ومولف(۴ ہدایہ وغیرہم اکابر علماء یہی ہے کہ ہر کنویں کے لئے اُسی کا ڈول معتبر ہوگا جس سے اس کا پانی بھرا جاتا ہے، ہاں اگر اُس کنویں کا کوئی ڈول معین نہ ہو تو اس ڈول کا اعتبار کریں گے جس میں ایک صاع عدس یا ماش آجائیں غنیہ میں ہے:

الدلو الوسط مایسع صاعا من الحب المعتدل ۱؎ (درمیانہ ڈول وہ ہے جس میں صاع برابر (دال وغیرہ کے) دانے آجائیں۔ ت) اور صاع(۱) ہمارے امام کے نزدیک آٹھ رطل کا ہوتا ہے ہر رطل بیس۲۰ اِستار ہر استار ساڑھے چار مثقال ہر مثقال ساڑھے چار ماشے، تو ہر رطل تینتیس۳۳ تولے نوماشے، اور صاع دوسو ستّر۲۷۰ تولے کا ہوا۔

 (۱؎ غنیۃ المستملی    فصل فی البئر    سہیل اکیڈمی لاہور    ص۱۵۷)

فی ردالمحتار عن شرح درر البحار اعلم ان الصاع اربعۃ امداد والمد رطلان والرطل نصف من والمن بالدراھم مائتان وستون درھما وبالاستار اربعون والاستار بکسرا لھمزۃ بالدراھم ستۃ ونصف وبالمثاقیل اربعۃ ونصف ۲؎ اھ

ردالمحتار میں شرح دررالبحار سے منقول ہے، معلوم ہونا چاہئے کہ صاع چار۴ مُد، اور مُد دو۲ رطل، اور رطل نصف مَن اور مَن کا وزن دوسوساٹھ۲۶۰ درہم اور مَن اِستار کے حساب سے چالیس۴۰ استار کا ہوتا ہے، اور استار کا وزن دراہم کے حساب سے ساڑھے چھ درہم اور مثاقیل کے حساب سے ساڑھے چار مثقال ہوتا ہے۔ اھ (ت)

 (۲؎ ردالمحتار    مطلب فی تحریر الصاع من الزکاۃ    مصطفی البابی مصر    ۲/۸۳)

اقول: والدرھم المذکور ھھنا غیر الدرھم الشرعی المعتبر بوزن سبع کما یشھد بذلک جعلہ الاستار بالدراھم ستۃ ونصفا وبالمثاقیل اربعۃ ونصفا اذلوکان بوزن سبع لکانت اربعۃ مثاقیل ونصف بالدراھم ستۃ وثلثۃ اسباع لانصفا وایضا لوکان المن ۲۶۰ درھما بوزن سبعۃ لکان من المثاقیل ۱۸۲مع انہ بحساب الاستار المذکور مائۃ وثمانون کمالایخفی علی المحاسب۔

میں کہتا ہوں کہ یہاں جس درہم کا ذکر کیا گیا ہے وہ شرعی درہم نہیں جس میں سات کا وزن معتبر ہے (یعنی دس درہم بمقابلہ سات مثقال) اس کی دلیل یہ ہے کہ انہوں نے اِستار کے حساب میں ساڑھے چار (۲/۱ -۴) مثقال کو ساڑھے چھ (۲/۱ -۶) دراہم کے برابر ذکر کیا ہے اور اگر سات کا وزن مراد ہوتا تو پھر ساڑھے چار (۲/۱ -۴) مثقال کے برابر ساڑھے چھ (۲/۱ -۶) کی بجائے چھ دراہم اور ایک درہم کے تین ساتویں حصے (۷/۳ -۶) کہا جاتا نیز اگر من دوسوساٹھ ۲۶۰ دراہم کا سات کے وزن پر ہوتا تو ایک سو بیاسی۱۸۲ مثقال مَن کی مقدار میں بیان کیا جاتا حالانکہ انہوں نے ایک سو بیاسی۱۸۲ مثقال کی بجائے ایک سو اسّی۱۸۰ مثقال کہا جو کہ حساب دان پر مخفی نہیں۔ (ت)

Page:
(1) 2 3 »

Navigate through the articles
Previous article تالاب میں کافی بوٹیاں ہوں تو کپڑے پاک کرنے کا حکم گائے یا بھینس کا پٹھا کنویں سے نکلے تو کیا حکم ہے؟ Next article
Rating 2.78/5
Rating: 2.8/5 (278 votes)
The comments are owned by the poster. We aren't responsible for their content.
show bar
Quick Menu