• Qur'an

    In Qur'an section, we will upload translations of Qu'an in different languages. The best Urdu translation of Qur'an is "Kanzul Iman", Alhamdulillah it has been translated in many languages of the world. In this section you can also read online the great Tafaseer (Commentary) of Qu'ran, including TAFSEER-E-NAEEMI and others.

    more »

     
  • Hadith

    In Hadith section, you will be able to read online the different collections of Hadith, translation and commentary on Hadith (Sharha). We will try to upload upload Hadith with Urdu translations and Urdu Sharha of Hadiths, in scanned and unicode format, In Sha Allah.

    more »

     
  • Fiqh

    Fiqh section contains big collection of Fatawa written by Sunni Ulema (Scholars of Islam). Alhamdulillah most of the fatawa collections are brought online for the first time. You can find solution of any issue as per the guidance of Qur'an and Sunnah. It includes, Fatawa Ridawiyyah, Fatawa Amjadiyyah, Fatawa Mustafviyyah and a lot more.

    more »

     
  • Dedication

    This website is particularly dedicated to the Revivalist of Islam in the 14th century, i.e. Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi Alaihir Rahmah. We want to bring online the uttermost research work being carried out over his personality and works around the globe. For further details visit "Works on Alahazrat" Section

    more »

     
  • Books of Alahazrat

    Books written by Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi contain extensive research on various branches of Islamic arts & sciences. This website gives you an opportunity to explore this hidden treasure. You can dip into this sea of knowledge by visiting this section

    more »

     
  • Fatawa Ridawiyyah

    Fatawa Ridawiyyah is one of the greatest writtings of Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi. The new translated version of this historical Fatawa consists of 30 volumes and more than 21000 pages. Reading this fatawa with care and memorizing the principles mentioned therein, can take the reader to a big height in Islamic Jurisprudence.

    more »

     
  • Sunni Library

    - Sunni Library is a collection of core Islamic Literature. You can read online the great work and contribution of Sunni Islamic scholars worldwide in general and by the Scholars of Sub Continent in particular.

    more »

     
Login
Username:

Password:

Remember me



Lost Password?

Register now!
Main Menu
Themes

(2 themes)
Fiqh > Q. & Ans. > Death / Funeral / Graves / موت / جنازہ / قبر > کافر کا مردہ جس کا کوئی وارث نہیں، کیا کیا جائے؟

کافر کا مردہ جس کا کوئی وارث نہیں، کیا کیا جائے؟

Published by Admin2 on 2014/9/10 (799 reads)

New Page 1

مسئلہ ۱۰۹: از مونگیر، محلہ دلاور پور مکان شیخ رحمت علی صاحب مرسلہ مولوی سید عطاء الحق صاحب ۱۳۱۳ھ

کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ کافر کے مُردہ کو جس کا کوئی وراث نہیں، کیا کیا جائے ؟ بیّنوا توجروا

الجواب

اس کے مذہب وملت والوں کو دے دیا جائے کہ جو چاہیں کریں، او راگر کفار میں بھی کوئی نہ ملے تو جیفہ سگ کی طرح  دفعِ عفونت کے لیے کسی گڑھے میں دبادیں۔ تفصیل مسئلہ یہ ہے کہ کافر دو قسم ہے : اصلی ومرتد۔ اصلی وہ  کہ ابتداء سے کافر ہو  اور مرتد وہ کہ بعد اسلام کافر ہوا یا  با وصف  دعوی اسلام عقائد کفر رکھے :  جیسے آج کل نیچری مرتد کے لیے تو اصلاً نہ غسل، نہ کفن، نہ دفن، نہ مسلمان کے ہاتھ سے کسی کافر کو دیا جائے اگر چہ وہ اسی کے مذہب کا ہو، اگر چہ اس کا باپ یا بیٹا ہو، بلکہ اس کا علاج وہی مرادار کتے کی طرح دبادینا ہے، اور کافر اصلی سے اگر مسلمان کو قرابت نہیں توا س کے بھی کسی کام میں شریک نہ ہو بلکہ چھوڑ دیا جائے کہ اس کا عزیز قریب یا مذہب والے جو چاہے کریں، او ر وہ بھی نہ ہوں تو علاج مثل علاج مرتد ہے، اور اگر مسلمان کو اس سے قرابت قریبہ ہے تاہم جب کوئی قریب کا فر موجود ہو بہتر  یہی ہے کہ اس کی تجہیز میں شرکت نہ کرے، ہاں ادائے حقِ قرابت کے لئے اگر ا سکے جنازہ کے ساتھ جنازہ سے دور دور چلاجائے تو مضائقہ نہیں، اور  اگر مسلمان ہی قریب ہے کوئی کافر قرابت دار نہیں جب بھی مسلمان پر اس کی تجہیز و تکفین ضروری نہیں، اگر اس کے ہم مذہب کافروں کو دے دے یا بے غسل وکفن کسی گڑھے میں پھنکوادے ، جائز ہے۔ او ر اگر بلحاظ قرابت غسل و کفن ودفن کرے تو بھی اجازت ہے مگر کسی کام میں رعایت طریقہ مسنونہ نہ کرے، نجاست دھونے کی طرح پانی بہادے، کسی چیتھڑے میں لپیٹ کر تنگ گڑھے میں دبادے۔رب انی اعوذبک من الکفر والکافرین( اے رب ! میں تیری پناہ لیتا ہوں کفر اور کافروں سے ۔ت )

درمختار میں ہے : ( یغسل المسلم ویکفن  ویدفن قریبہ) کخالہ ( الکافر الاصلی) اما المرتد فیلقی فی حفرۃ کالکلب ( عند الاحتیاج) فلولہ قریب فالا ولی ترکہ لھم من غیر مراعاۃ السنۃ) فیغسلہ غسل الثواب النجس ویلفہ فی خرقہ ویلقیہ فی حفرۃ ۱؎ اھ اقول ولفظ البحر حفیرۃ ۲؎ اھ (مسلمان اپنے قرابت دار) جیسے ماموں (کافر اصلی کو) غسل وکفن دفن کرے،رہا مرتد تو اسے کسی گڑھے میں کتے کی طرح دبادے ( ضرورت کے وقت) تو  اگر  اس کا کوئی اور قرابت دار ہے توبہتر یہ ہے کہ انھیں دے دے (بغیر رعایت سنت کے غسل اور کفن دفن کرے) توکسی ناپاک کپڑے کی طرح دھوئے او رکسی چیتھڑے میں لپیٹ کر کسی گھڑے میں ڈال دے اھ

 (۱؎ درمختار    باب صلٰوۃ الجنائز    مطبع مجتبائی دہلی    ۱/ ۱۲۳)

(۲؎ بحرالرائق    کتاب الجنائز    ایچ ایم سعید کمپنی کراچی    ۲/ ۱۹۳)

اقول و لفظ البحر حفيرة اھ قال الطحطاوی فی حاشیۃ المراقی ای بدون لحد ولا توسعۃ ۱؎ اھ وفی الایضاح ومراقی الفلاح فی خرفۃ ، والقاہ فی حفرۃ من غیر وضع کالجیفۃ مراعاۃ لحق القرابۃ  او دفع القریب الی اھل ملتہ، ویتبع جنازتہ من بعید، وفیہ اشارۃ الی ان المرتد لایمکن منہ احد لغسلہ لان لاملۃ لہ فیلقی کجیفۃ کلب فی حفرۃ ۲؎ اھاقول بحر کی عبارت میں حفیرۃ ( تنگ کڑھا) ہے۔ طحطاوی نے حاشیہ مراق الفلاح میں کہا یعنی لحداور کشادگی کے بغیر اھ ایضاح اور مراقی الفلاح میں ہے اسے کسی ناپاک کپڑے کی طرح دھوئے اور کسی معمولی کپڑے میں کفن دے کر کسی گڑھے میں مردارکی طرح ڈال دے تاکہ حق قرابت کی رعایت ہوجائے یا قرابت دار  اس کے اہل مذہب کو دے دے اور خود دور سے جنازے، کے  پیچھے چلا جائے، او راس میں اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ مرتد کو غسل کے لئے کسی کو نہ دے اس لئے کہ اس سے کوئی رشتہ وتعلق نہیں تو کتے کی طرح کسی گڑھے میں ڈال دے گا اھ

 (۱؎ حاشیۃ الطحطاوی علی مراقی الفلاح  فصل السلطان احق بصلٰوۃ  نور محمد کار خانہ تجارت کتب کراچی ص ۳۳۰)

(۲؎ مراقی الفلاح مع حاشیۃ الطحطاوی    فصل السلطان احق بصلٰوۃ    نور محمد کار خانہ تجارت کتب کراچی    ص ۳۳۰)

مختصرا وفی  ردالمحتار قولہ یغسل المسلم ای جواز لا ن من شروط وجوب الغسل کون المیّت مسلما  ۳؎ الخ۔مختصراً___ردالمحتار میں ہے مسلمان کا کافر اصلی قرابت دار کو غسل دینا صرف جوازاً  ہے اس لئے کہ وجوب غسل کی شرطوں میں یہ ہے کہ میّت مسلم ہو الخ (ت)

 (۳؎ ردالمحتار   باب صلٰوۃ الجنائز     ادارۃ الطباعۃ المصریہ مصر    ۱/ ۵۹۷)

کشف الغطاء میں جامع صغیر امام صدر شہید سے ہے :اگر قریب نباشد دفع کردہ شود باہل دین او تاہر چہ خواہند بوے کنند ۴؎ ۔ واﷲ تعالٰی اعلماگر کوئی مسلمان قرابت دار نہ ہو تو اس کے اہل مذہب کو دے دیا جائے گا کہ اس کے ساتھ جو چاہیں کریں۔  واﷲ تعالٰی اعلم (ت)

 (۴؎ کشف الغطاء     فصل دفنِ میّت     مطبع احمدی دہلی    ص ۴۷)


Navigate through the articles
Previous article میونسپلٹی زبردستی زمین لےکرمردے دفن کروائےتو مسجد کے اندر قبور اور صحن کا مسئلہ Next article
Rating 2.81/5
Rating: 2.8/5 (202 votes)
The comments are owned by the poster. We aren't responsible for their content.
show bar
Quick Menu