• Qur'an

    In Qur'an section, we will upload translations of Qu'an in different languages. The best Urdu translation of Qur'an is "Kanzul Iman", Alhamdulillah it has been translated in many languages of the world. In this section you can also read online the great Tafaseer (Commentary) of Qu'ran, including TAFSEER-E-NAEEMI and others.

    more »

     
  • Hadith

    In Hadith section, you will be able to read online the different collections of Hadith, translation and commentary on Hadith (Sharha). We will try to upload upload Hadith with Urdu translations and Urdu Sharha of Hadiths, in scanned and unicode format, In Sha Allah.

    more »

     
  • Fiqh

    Fiqh section contains big collection of Fatawa written by Sunni Ulema (Scholars of Islam). Alhamdulillah most of the fatawa collections are brought online for the first time. You can find solution of any issue as per the guidance of Qur'an and Sunnah. It includes, Fatawa Ridawiyyah, Fatawa Amjadiyyah, Fatawa Mustafviyyah and a lot more.

    more »

     
  • Dedication

    This website is particularly dedicated to the Revivalist of Islam in the 14th century, i.e. Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi Alaihir Rahmah. We want to bring online the uttermost research work being carried out over his personality and works around the globe. For further details visit "Works on Alahazrat" Section

    more »

     
  • Books of Alahazrat

    Books written by Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi contain extensive research on various branches of Islamic arts & sciences. This website gives you an opportunity to explore this hidden treasure. You can dip into this sea of knowledge by visiting this section

    more »

     
  • Fatawa Ridawiyyah

    Fatawa Ridawiyyah is one of the greatest writtings of Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi. The new translated version of this historical Fatawa consists of 30 volumes and more than 21000 pages. Reading this fatawa with care and memorizing the principles mentioned therein, can take the reader to a big height in Islamic Jurisprudence.

    more »

     
  • Sunni Library

    - Sunni Library is a collection of core Islamic Literature. You can read online the great work and contribution of Sunni Islamic scholars worldwide in general and by the Scholars of Sub Continent in particular.

    more »

     
Login
Username:

Password:

Remember me



Lost Password?

Register now!
Main Menu
Themes

(2 themes)
Fiqh > Q. & Ans. > Death / Funeral / Graves / موت / جنازہ / قبر > پختہ قبر و سالانہ ایصال ثواب و فیض رسانی کا حکم

پختہ قبر و سالانہ ایصال ثواب و فیض رسانی کا حکم

Published by Admin2 on 2014/9/17 (1230 reads)
Page:
(1) 2 »

New Page 1

مسئلہ ۱۳۱: از بجنور مرسلہ شیخ معین الدین صاحب ماسٹر پٹواری اسکول ضلع بجنور ۲۱ جمادی الاخری ۱۳۲۳ھ

کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ زید نے بلحاظ نرمی زمین وحفظ نعش اپنے پیر طریقت کی قبر کو پختہ بنوایا اور سالیانہ تاریخ وفات شیخ پر قرآن شریف اور درود وکلمہ پڑھوا کر شیخ مذکور کی رُوح پر فتوح کو ایصال ثواب کرتا ہے اور بامید فیضان وحلِ مشکلات شیخ کی قبر پر جاکر بیٹھتاہے اور وساطۃً اس سے استمداد کرتا ہے تو یہ ایصال ثواب او راستمداد عن الاموات زید کا جائز ہے یانہیں ار ارتکاب عمل ہذا زید کے پیچھے نماز پڑھنی جائز ہوگی یا نہیں؟ بینوا توجروا

الجواب

امواتِ مسلمین کو ایصال ثواب بے قید تاریخ خواہ بحفظ تاریخ معیّن مثلاً روزِ وفات جبکہ اس کاالتزام بنظرِ تذکیر وغیرہ مقاصد صحیحہ ہو،نہ اس خیال جاہلانہ سے کہ تعیین شرعاً ضروریا وصولِ ثواب اسی میں محصور، یو نہی عرس مشائخ کہ منکرات شرعیہ مثلاً رقص ومزامیر وغیر سے خالی ہو۔، اسی طرح اولیائے کرام وسائل بارگاہ ونوابِ حضرت احیائے معنی واموات صورۃ قدست اسرارہم سے استعانت واستمداد جبکہ بطور توسّل وتوسط وطلبِ شفاعت ہو، نہ معاذاﷲ بظنِ خبیث، استقلال وقدرت ذاتہ، جس کا توہم نہ کسی مسلم سے معقول نہ مسلمان ہونے پر سوئے ظن مقبول، یہ سب امور شرعاً جائز وروا ومباح ہیں جن کے منع پر شرع مطہرہ سے اصلاً دلیل نہیں۔ فقیر غفر اﷲ تعالٰی نے متعدد مسائل ورسائل مندرجہ فتاوٰی فقری مسمی بہالبارقۃ الشارقۃ علی مارقۃ  المشارقۃمیں ان سب مسئلوں کی تحقیق انیق بروجہ کافی ذکر کی۔اور دربارہ استعانت خاص ایک رسالہ مسمّی بہ برکات الامداد لاھل الاستمداد تالیف کیا۔ ان کے بعد تفصیل تازہ کی حاجت نہیں، اور قبر پختہ بنانے میں حاصل ارشاد علمائے امجادر حمہم اﷲ تعالٰی یہ ہے کہ اگر پکی اینٹ میّت کے متصل یعنی اس کے آس پاس کسی جہت میں نہیں کہ حقیقۃً قبر اسی کا نام ہے بلکہ گڑھا کچّا اور بالائے قبر پختہ ہے تو مطلقاً ممانعت نہیں، یہاں تک کہ امامِ اجل فقیہِ مجتہد اسمٰعیل زاہدی نے خاص لحد میں پکی اینٹ پر نص فرمایا جبکہ کچّے چوکے کی تَہ ہواور اپنی قبر مبارک میں یونہی کرنے کی وصیت فرمائی او رمتصل میّت ممنوع مکروہ ، مگر جبکہ بضرورت تری ونرمی زمین ہو تو ا س میں بھی حرج نہیں۔

درمختا ر میں ہے:درمختا ر میں ہے:یسوی المین علیہ والقصب لاالاٰجر المطبوخ والخشب لوحولہ امافوقہ فلا یکرہ ابن ملکوجاز حولہ   بارض رخوۃ کالتابوت ۱ ۔یسوی المین علیہ والقصب لاالاٰجر المطبوخ والخشب لوحولہ امافوقہ فلا یکرہ ابن ملکوجاز حولہ   بارض رخوۃ کالتابوت ۱ ۔اس پرکچی انیٹیں ا وربانس چُن دے ، پکی انیٹیں اور لکڑی اس کے گرد نہ لگائے، اوپر ہو تومکروہ نہیں، ابن الملک۔ او رنرم زمین ہو تو ا س کے گرد بھی جائز ہے جیسے تابوت ۔(ت)

اس پرکچی انیٹیں ا وربانس چُن دے ، پکی انیٹیں اور لکڑی اس کے گرد نہ لگائے، اوپر ہو تومکروہ نہیں، ابن الملک۔ او رنرم زمین ہو تو ا س کے گرد بھی جائز ہے جیسے تابوت ۔(ت)

 (۱؎ درمختار   باب صلٰوۃ الجنائز  مطبع مجتبائی دہلی۱/ ۱۲۵)

 (۱؎ درمختار   باب صلٰوۃ الجنائز  مطبع مجتبائی دہلی۱/ ۱۲۵)

حلیہ پھرردالمحتار میں ہے :حلیہ پھرردالمحتار میں ہے :کرھوالا جرو الواح الخشب وقال الامام التمرتاشی ھذا  ان کان حول المیّت وان کان فوقہ لایکرہ لانہ یکون عصمۃ من السبع وقال مشائخ بخار ا لایکرہ الاٰجرفی بلد تنا لمساس الحاجۃ لضعف الاراضی ۱؎ ۔کرھوالا جرو الواح الخشب وقال الامام التمرتاشی ھذا  ان کان حول المیّت وان کان فوقہ لایکرہ لانہ یکون عصمۃ من السبع وقال مشائخ بخار ا لایکرہ الاٰجرفی بلد تنا لمساس الحاجۃ لضعف الاراضی ۱؎ ۔علماء نے پکی اینٹوں او رلکڑی کے تختوں کو مکروہ کہا ہےاورامام تمرتاشی نے فرمایا: یہ اس وقت ہے جب میّت کے گرد ہو، اور اگر اس کے اوپر ہو تو مکروہ نہیں اس لیے کہ یہ درندے سے حفا ظت کا ذریعہ ہوگا، مشائخ بخارا نے فرمایا کہ ہمارے دیار میں پکی اینٹیں مکروہ نہیں کیونکہ زمین کمزور ہونے کی وجہ سے اس کی ضرورت ہے ۔(ت)

علماء نے پکی اینٹوں او رلکڑی کے تختوں کو مکروہ کہا ہےاورامام تمرتاشی نے فرمایا: یہ اس وقت ہے جب میّت کے گرد ہو، اور اگر اس کے اوپر ہو تو مکروہ نہیں اس لیے کہ یہ درندے سے حفا ظت کا ذریعہ ہوگا، مشائخ بخارا نے فرمایا کہ ہمارے دیار میں پکی اینٹیں مکروہ نہیں کیونکہ زمین کمزور ہونے کی وجہ سے اس کی ضرورت ہے ۔(ت)

 (۱؎ ردالمحتار  باب صلٰوۃ الجنائز    داراحیاء التراث العربی بیروت    ۱/ ۶۰۰)

 (۱؎ ردالمحتار  باب صلٰوۃ الجنائز    داراحیاء التراث العربی بیروت    ۱/ ۶۰۰)

خانیہ و خلاصہ وہندیہ میں ہے :خانیہ و خلاصہ وہندیہ میں ہے :یکرہ الاٰجرفی اللحد اذاکان یلی المیّت اما فیما وراء ذلک لاباس بہ ویستحب للبن والقصب ۲؎ ۔یکرہ الاٰجرفی اللحد اذاکان یلی المیّت اما فیما وراء ذلک لاباس بہ ویستحب للبن والقصب ۲؎ ۔لحد میں پکّی اینٹ مکروہ ہے جبکہ میّت سے متصل ہو اس کے علاوہ میں کوئی حرج نہیں، اور مستحب کچی اینٹ اور بانس ہے ۔(ت)

لحد میں پکّی اینٹ مکروہ ہے جبکہ میّت سے متصل ہو اس کے علاوہ میں کوئی حرج نہیں، اور مستحب کچی اینٹ اور بانس ہے ۔(ت)

 (۲؎ فتاوٰی قاضی خاں  کتاب الصلٰوۃ    منشی نولکشور لکھنؤ        ۱/ ۹۲)

 (۲؎ فتاوٰی قاضی خاں  کتاب الصلٰوۃ    منشی نولکشور لکھنؤ        ۱/ ۹۲)

حسامی پھر امداد الفتاح پھر طحطاوی علی مراقی الفلاح میں ہے :حسامی پھر امداد الفتاح پھر طحطاوی علی مراقی الفلاح میں ہے :وقد نص اسمٰعیل الزاھد بالاٰجر خلف اللبن علی اللحد واوصٰی بہ ۳؎ ۔وقد نص اسمٰعیل الزاھد بالاٰجر خلف اللبن علی اللحد واوصٰی بہ ۳؎ ۔سمٰعیل زاہد نے لحد پر کچی اینٹ کے پیچھے پکّی اینٹ لگانے کی صراحت فرمائی اور اس کی وصیت کی (ت)

سمٰعیل زاہد نے لحد پر کچی اینٹ کے پیچھے پکّی اینٹ لگانے کی صراحت فرمائی اور اس کی وصیت کی (ت)

 (۳؎ الطحطاوی علٰی مراقی الفلاح   فصل فی حملہا ودفنہا     نور محمد کارخانہ تجارت کتب کراچی    ص ۳۳۵)

 (۳؎ الطحطاوی علٰی مراقی الفلاح   فصل فی حملہا ودفنہا     نور محمد کارخانہ تجارت کتب کراچی    ص ۳۳۵)

منافع ومبسوط پھر غنیہ میں ہے :منافع ومبسوط پھر غنیہ میں ہے :اختار والشق فی دیار نالر خاوۃ الاراضی فیتعذر اللحدفیھا اجاز واالاٰجر ورفوف الخشب والتابوت ولوکان من حدید ۴؎ ۔اختار والشق فی دیار نالر خاوۃ الاراضی فیتعذر اللحدفیھا اجاز واالاٰجر ورفوف الخشب والتابوت ولوکان من حدید ۴؎ ۔ہمارے دیار میں شق اختیار کی گئی ہے اس لیے کہ زمین نرم ہے جس میں لحد متعذر ہے یہاں تک کہ علماء نے پکّی اینٹ، لکڑی کے صندوق ا ورتابوت کی اجازت دی ہے اگر چہ لوہے کا ہو۔ (ت)

ہمارے دیار میں شق اختیار کی گئی ہے اس لیے کہ زمین نرم ہے جس میں لحد متعذر ہے یہاں تک کہ علماء نے پکّی اینٹ، لکڑی کے صندوق ا ورتابوت کی اجازت دی ہے اگر چہ لوہے کا ہو۔ (ت)

(۴؎ غنیہ المستملی شرح منیۃ المصلی فصل فی الجنائز  سہیل اکیڈمی لاہور   ص ۵۹۵)

(۴؎ غنیہ المستملی شرح منیۃ المصلی فصل فی الجنائز  سہیل اکیڈمی لاہور   ص ۵۹۵)

بحرالرائق میں ہے:بحرالرائق میں ہے:قیدہ الامام السرخسی بان لایکون الغالب علی الاراضی النزوالرخاوۃ فان کان فلاباس بھما کا تخاذتا بوت من حدید لھذا۱؎ ۔قیدہ الامام السرخسی بان لایکون الغالب علی الاراضی النزوالرخاوۃ فان کان فلاباس بھما کا تخاذتا بوت من حدید لھذا۱؎ ۔امام سرخسی نے اس حکم کو اس سے مقید کیا ہے کہ زمین پر تری ا ورنرمی غالب نہ ہو۔ اگر ایسی ہو تو پکی اینٹ اور لکڑی لگانے میں کوئی حرج نہیں ، جیسے اس بناء پر لوہے کا تابوت لگانے میں حرج نہیں ۔(ت)

امام سرخسی نے اس حکم کو اس سے مقید کیا ہے کہ زمین پر تری ا ورنرمی غالب نہ ہو۔ اگر ایسی ہو تو پکی اینٹ اور لکڑی لگانے میں کوئی حرج نہیں ، جیسے اس بناء پر لوہے کا تابوت لگانے میں حرج نہیں ۔(ت)

 (۱؎ بحرالرائق  کتاب الجنائز  فصل السلطان احق بصلٰوتہ ایچ ایم سعید کمپنی کراچی  ۲/۱۹۴ )

 (۱؎ بحرالرائق  کتاب الجنائز  فصل السلطان احق بصلٰوتہ ایچ ایم سعید کمپنی کراچی  ۲/۱۹۴ )

Page:
(1) 2 »

Navigate through the articles
Previous article پرانے,نئے قبرستان سے متعلق دیوبند کے فتوے کاحکم مردہ کو معلوم ہوتا ہے کہ کون اسکی قبر پر آیا؟ Next article
Rating 2.84/5
Rating: 2.8/5 (203 votes)
The comments are owned by the poster. We aren't responsible for their content.
show bar
Quick Menu