• Qur'an

    In Qur'an section, we will upload translations of Qu'an in different languages. The best Urdu translation of Qur'an is "Kanzul Iman", Alhamdulillah it has been translated in many languages of the world. In this section you can also read online the great Tafaseer (Commentary) of Qu'ran, including TAFSEER-E-NAEEMI and others.

    more »

     
  • Hadith

    In Hadith section, you will be able to read online the different collections of Hadith, translation and commentary on Hadith (Sharha). We will try to upload upload Hadith with Urdu translations and Urdu Sharha of Hadiths, in scanned and unicode format, In Sha Allah.

    more »

     
  • Fiqh

    Fiqh section contains big collection of Fatawa written by Sunni Ulema (Scholars of Islam). Alhamdulillah most of the fatawa collections are brought online for the first time. You can find solution of any issue as per the guidance of Qur'an and Sunnah. It includes, Fatawa Ridawiyyah, Fatawa Amjadiyyah, Fatawa Mustafviyyah and a lot more.

    more »

     
  • Dedication

    This website is particularly dedicated to the Revivalist of Islam in the 14th century, i.e. Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi Alaihir Rahmah. We want to bring online the uttermost research work being carried out over his personality and works around the globe. For further details visit "Works on Alahazrat" Section

    more »

     
  • Books of Alahazrat

    Books written by Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi contain extensive research on various branches of Islamic arts & sciences. This website gives you an opportunity to explore this hidden treasure. You can dip into this sea of knowledge by visiting this section

    more »

     
  • Fatawa Ridawiyyah

    Fatawa Ridawiyyah is one of the greatest writtings of Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi. The new translated version of this historical Fatawa consists of 30 volumes and more than 21000 pages. Reading this fatawa with care and memorizing the principles mentioned therein, can take the reader to a big height in Islamic Jurisprudence.

    more »

     
  • Sunni Library

    - Sunni Library is a collection of core Islamic Literature. You can read online the great work and contribution of Sunni Islamic scholars worldwide in general and by the Scholars of Sub Continent in particular.

    more »

     
Login
Username:

Password:

Remember me



Lost Password?

Register now!
Main Menu
Themes

(2 themes)
Fiqh > Q. & Ans. > Zakat / زکٰوۃ > زکوۃ پیسوں کی بجائےکھانا یا کپڑے دینےکا کیاحکم ہے

زکوۃ پیسوں کی بجائےکھانا یا کپڑے دینےکا کیاحکم ہے

Published by Admin2 on 2014/10/27 (709 reads)

New Page 1

مسئلہ ۴:کیا فر ماتے علمائے دین اس صور ت میں کہ اگر کسی شخص نے عوض اس زر زکوٰۃ کہ جو اس کہ ذمّہ واجب ہے محتاجو ں کو کھانا کھلادیا یا کپڑے بنادئے تو زکوٰۃ ادا ہو جائیگی یا نہیں؟بینو ا توجروا۔

الجواب : عوض زر زکوٰۃ کے محتاجوں کو کپڑے بنادینا، انھیں کھانا دے دینا جائز ہے اور اس سے زکوٰۃ ادا ہو جائیگی خاص روپیہ ہی دینا واجب نہیں مگر ادائے زکوٰۃ کے معنیٰ یہ ہیں کہ اس قدر مال کا محتاجوں کو مالک کر دیا جائے  اسی واسطے اگر فقراء و مساکین کو مثلاًاپنے گھر بلا کر کھانا پکا کر بطریقِ دعوت کھلادیا تو ہر گز زکوٰۃ ادا نہ ہوگی کہ یہ صورت اباحت ہے نہ کہ تملیک ، یعنی مدعو  اس طعام کو ملکِ داعی پر کھاتا ہے اور اس کا مالک نہیں ہو جاتا اسی واسطے مہمانو ں کو روا نہیں کہ طعامِ دعوت سے بے اذنِ دعوت میزبان گداؤں یا جانوروں کو دے دیں ، یا ایک خوان والے دوسرے خوان والے کو اپنے پاس کچھ اٹھا دیں یا بعد فراغ جو باقی بچے اپنے گھر لے جائیں۔فی الدرالمختار لو اطعم یتیما ناویا الزکوٰۃ لا یجزیہ الااذادفع الیہ المطعوم کما لو کساہ ۱؎ انتھی قولہ کما لو کساہ ای کما یجزیہ۲؎ ۱ھ طحطاوی عن الحلبی وفی الحاشیۃ الطحطاویۃ ایضا فی باب المصرف لا یکفی فیھا الاطعام الابطریق التملیک ولواطعمہ عندہ نا ویا الزکوٰۃلا یکفی ۳؎  انتھی۔درمختار میں ہے کہ کسی نے یتیم کو بنیتِ زکوٰۃکھانا کھلایا تو زکوٰۃ ادا نہ ہوگی مگر اس صورت میں جب کھانا اس کے سپردکر دیا گیا ہو ، جیسا کہ اگراسے لباس پہنادیا گیا ہو انتہی قولہ ''کمالوکساہ'' یعنی اس صورت میں بھی زکوٰۃادا ہوجائیگی اھ طحطاوی عن الحلبی اور حاشیہ  طحطاویہ کے باب المصرف میں یہ بھی ہے کھانا کھلادینا کافی نہیں البتہ اگر مالک کردے توپھر کافی ہے، اور اگر کسی نے نیتِ زکوٰۃسے کھانا کھلایا تو کافی نہ ہوگاانتہی (ت)

(۱؎ درمختار          کتاب الزکوٰۃ        مطبع مجتبائی دہلی        ۱ /۱۲۹)

(۲؎ حاشیہ الطحطاوی علی الدرالمختار کتاب الزکوٰۃ        دارالمعرفۃ بیروت        ۱ /۳۸۸)

(۳؎ حاشیہ الطحطاوی علی الدرالمختار باب المصرف        دارالمعرفۃ بیروت            ۱ /۴۲۵)

ہاں اگر صاحبِ زکوٰۃ نے کھانا خام خواہ پختہ مستحقین کے گھر بھجوادیا یا اپنے ہی گھر کھلایا مگر بتصریح پہلے مالک کردیا تو زکوٰۃ ادا ہو جائیگی،فان العبرۃللتملیک ولا مدخل فیہ لا کلہ فی بیت المزکی اوارسالہ الی بیوت المستحقین وما ذکرہ الطحطاوی محمول علی الدعوۃ المعروفۃ فانھا المتبادرۃ منہ وانھا لا تکون الا علی سبیل الا باحۃ، واﷲ تعالٰی اعلم۔کیونکہ اعتبار تملیک کا ہے اس میں اس کا کوئی دخل نہیں کہ زکوٰۃ دینے والے کی گھر کھانا کھایا یا مستحق لوگوں کے گھر بھیج دیا ہو۔ اور جو طحطاوی نے ذکر کیا وہ دعوتِ معروفہ پر محمول ہے کیونکہ اس سے متبادر ہے کہ یہ دعوت بطورِ تملیک نہیں ہوتی بلکہ بطورِ اباحت ہوتی ہے، وا ﷲتعالےٰ اعلم (ت)


Navigate through the articles
چوری سے نقصان زکوۃ سے منہا کرنے کی نیت کرنا کیسا؟ Next article
Rating 2.91/5
Rating: 2.9/5 (156 votes)
The comments are owned by the poster. We aren't responsible for their content.
show bar
Quick Menu