• Qur'an

    In Qur'an section, we will upload translations of Qu'an in different languages. The best Urdu translation of Qur'an is "Kanzul Iman", Alhamdulillah it has been translated in many languages of the world. In this section you can also read online the great Tafaseer (Commentary) of Qu'ran, including TAFSEER-E-NAEEMI and others.

    more »

     
  • Hadith

    In Hadith section, you will be able to read online the different collections of Hadith, translation and commentary on Hadith (Sharha). We will try to upload upload Hadith with Urdu translations and Urdu Sharha of Hadiths, in scanned and unicode format, In Sha Allah.

    more »

     
  • Fiqh

    Fiqh section contains big collection of Fatawa written by Sunni Ulema (Scholars of Islam). Alhamdulillah most of the fatawa collections are brought online for the first time. You can find solution of any issue as per the guidance of Qur'an and Sunnah. It includes, Fatawa Ridawiyyah, Fatawa Amjadiyyah, Fatawa Mustafviyyah and a lot more.

    more »

     
  • Dedication

    This website is particularly dedicated to the Revivalist of Islam in the 14th century, i.e. Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi Alaihir Rahmah. We want to bring online the uttermost research work being carried out over his personality and works around the globe. For further details visit "Works on Alahazrat" Section

    more »

     
  • Books of Alahazrat

    Books written by Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi contain extensive research on various branches of Islamic arts & sciences. This website gives you an opportunity to explore this hidden treasure. You can dip into this sea of knowledge by visiting this section

    more »

     
  • Fatawa Ridawiyyah

    Fatawa Ridawiyyah is one of the greatest writtings of Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi. The new translated version of this historical Fatawa consists of 30 volumes and more than 21000 pages. Reading this fatawa with care and memorizing the principles mentioned therein, can take the reader to a big height in Islamic Jurisprudence.

    more »

     
  • Sunni Library

    - Sunni Library is a collection of core Islamic Literature. You can read online the great work and contribution of Sunni Islamic scholars worldwide in general and by the Scholars of Sub Continent in particular.

    more »

     
Login
Username:

Password:

Remember me



Lost Password?

Register now!
Main Menu
Themes

(2 themes)
Fiqh > Q. & Ans. > Wudhu / Ablution / وضو > مسجد کے دہ در دو حوض کے احکام

مسجد کے دہ در دو حوض کے احکام

Published by Admin2 on 2012/4/24 (1137 reads)

New Page 1

مسئلہ ۱۲۵:از باسنی متصل ناگور ماڑواڑ مرسلہ امیر احمد صاحب۹۔ شوال ۱۳۳۷ھ

کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ مسجد کا دہ در دہ حوض طول مکث وکثیر الاستعمال کی وجہ سے بدبُو کرجائے اور رنگ میں تغیر آجائے تو وضو کرنا درست ہے  یا نہیں۔ایک  مولوی صاحب ماءِ مستعمل  غیر مطہر قرار دے کر پیشاب کے برابر فرمارہے ہیں اور یہ بھی فرمارہے ہیں کہ ہمارے امام صاحب کے نزدیک  ماءِ مستعمل نجس بہ نجاست غلیظہ ہے لہذا نجس ہے تو کیا وہ دہ در دہ حوض کا پانی مستعمل قرار د یا جاسکتا ہے مولٰنا عبدالحی صاحب لکھنوی مرحوم فتاوٰی عالمگیری وفتاوٰی قاضی خان کا حوالہ دیتے ہوئے اپنے فتاوٰی میں تحر یر فرماتے ہیں کہ ایسے پانی سے وضو بنانا درست ہےیجوز التوضئ فی الحوض الکبیر المنتن اذا لم یعلم نجاستہ ۳؎۔ (بڑے بدبودار حوض سے وضو کرنا جائز ہے جب تک نجاست کا علم نہ ہو۔ت) اسے مولوی صاحب موصوف تسلیم نہیں کرتے۔

 (۳؎ فتاوٰی ہندیہ    الفصل الاول من باب المیاہ    المطبعۃ الکبرٰی الامیریہ مصر    ۱/۱۸)

الجواب: طول مکث سے بدبولانا پانی کو نجس نہیں کرسکتا اگرچہ کٹورا بھر ہو،تنو یر و غیرہ متون میں ہے:ینجس بتغیر احد اوصافہ بنجس لا لوتغیر بمکث ۱؎۔نجاست ملنے سے کوئی وصف بدل جائے تو پانی ناپاک ہوجاتا ہے ز یادہ د یر ٹھہرنے سے بدلے تو ناپاک نہیں ہوتا۔ (ت)

 (۱؎ درمختار مع التنو یر    باب المیاہ    مطبوعہ مجتبائی دہلی    ۱/۳۵)

درمختار میں ہے: فلوعلم نتنہ بنجاسۃ لم یجز ولوشک فالاصل الطھارۃ ۲؎۔اگر نجاست کی وجہ سے پانی کے بدبودار ہونے کا یقین ہو تو وضو جائز نہیں اور اگر شک ہوتو اصل چیز طہارت ہے (لہذا جائز ہوگا)۔(ت)

(۲؎ درمختار مع التنو یر    باب المیاہ    مطبوعہ مجتبائی دہلی    ۱/۳۵)

دہ در دہ حوض قلیل نجاست سے بھی ناپاک نہیں ہوتا نہ کہ مائے مستعمل سے مائے مستعمل صحیح ومعتمد ومفتی بہ مذہب میں ناپاک نہیں طاہر  غیر مطہر ہے یہی ہمارے امام اعظم رضی اللہ تعالٰی عنہ کا مذہب معتمد ہے۔تنویرالابصار میں ہے:وھو طاھر لیس بطھور ۳؎۔اور وہ پاک ہے پاک کرنے والا نہیں۔(ت)

 (۳؎ درمختار مع التنو یر    باب المیاہ    مطبوعہ مجتبائی دہلی    ۱/۳۷)

ردالمحتار میں ہے: رواہ محمد عن الامام وھذہ الروا یۃ ھی المشھورۃ عنہ واختارھا المحققون قالوا علیھا الفتوٰی ۴؎۔اسے امام محمدرحمہ اللہ تعالٰی نے امام اعظم رحمہ اللہ تعالٰی سے روایت کیا ہے اور ان سے مشہور روایت یہی ہے اور محققین نے اسے اختیار کیا ہے اور فرما یا اسی پر فتوٰی ہے۔(ت)

 (۴؎ ردالمحتار    باب المیاہ    مصطفی البابی مصر    ۱/۱۴۷)

مائے مستعمل اگر  غیر مستعمل سے زائد  یا برابر ہوجائے تو مجموع سے وضو ناجائز ہوگا اور مستعمل کم ہے تو وضو جائز ۔درمختار میں ہے:غلبۃ المخالط لومماثلا کمستعمل فبالاجزاء فان المطلق اکثر من النصف جاز التطھیر بالکل والا لا ۱؎۔اگر (پانی میں) ملنے والی چیز اسی جیسی ہو جیسے مستعمل پانی تو غلبے کا اعتبار اجزاء کے اعتبار سے ہوگا اگر مطلق پانی نصف سے ز یادہ ہے تو تمام پانی سے طہارت حاصل کرنا جائز ہے ورنہ نہیں۔(ت)

 (۱؎ درمختار     باب المیاہ        مجتبائی دہلی        ۱/۳۴)

بالجملہ حوض مذکور سے وضو بلاشبہ جائز ہے اور معترض کا قول غلط وناقابل التفات۔واللہ تعالٰی اعلم۔


Navigate through the articles
Previous article کتا کنوئیں میں گر جائے تو؟ بُوٹ کیا چمڑے کے موزے کا حکم رکھتا ہے Next article
Rating 2.81/5
Rating: 2.8/5 (274 votes)
The comments are owned by the poster. We aren't responsible for their content.
show bar
Quick Menu