• Qur'an

    In Qur'an section, we will upload translations of Qu'an in different languages. The best Urdu translation of Qur'an is "Kanzul Iman", Alhamdulillah it has been translated in many languages of the world. In this section you can also read online the great Tafaseer (Commentary) of Qu'ran, including TAFSEER-E-NAEEMI and others.

    more »

     
  • Hadith

    In Hadith section, you will be able to read online the different collections of Hadith, translation and commentary on Hadith (Sharha). We will try to upload upload Hadith with Urdu translations and Urdu Sharha of Hadiths, in scanned and unicode format, In Sha Allah.

    more »

     
  • Fiqh

    Fiqh section contains big collection of Fatawa written by Sunni Ulema (Scholars of Islam). Alhamdulillah most of the fatawa collections are brought online for the first time. You can find solution of any issue as per the guidance of Qur'an and Sunnah. It includes, Fatawa Ridawiyyah, Fatawa Amjadiyyah, Fatawa Mustafviyyah and a lot more.

    more »

     
  • Dedication

    This website is particularly dedicated to the Revivalist of Islam in the 14th century, i.e. Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi Alaihir Rahmah. We want to bring online the uttermost research work being carried out over his personality and works around the globe. For further details visit "Works on Alahazrat" Section

    more »

     
  • Books of Alahazrat

    Books written by Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi contain extensive research on various branches of Islamic arts & sciences. This website gives you an opportunity to explore this hidden treasure. You can dip into this sea of knowledge by visiting this section

    more »

     
  • Fatawa Ridawiyyah

    Fatawa Ridawiyyah is one of the greatest writtings of Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi. The new translated version of this historical Fatawa consists of 30 volumes and more than 21000 pages. Reading this fatawa with care and memorizing the principles mentioned therein, can take the reader to a big height in Islamic Jurisprudence.

    more »

     
  • Sunni Library

    - Sunni Library is a collection of core Islamic Literature. You can read online the great work and contribution of Sunni Islamic scholars worldwide in general and by the Scholars of Sub Continent in particular.

    more »

     
Login
Username:

Password:

Remember me



Lost Password?

Register now!
Main Menu
Themes

(2 themes)
Fiqh > Q. & Ans. > Qir'at/ Reciting / قراءت > تیسری،چوتھی رکعت میںقرات جہرکرےتوسجدہ سہوہوگا

تیسری،چوتھی رکعت میںقرات جہرکرےتوسجدہ سہوہوگا

Published by Admin2 on 2012/7/15 (1192 reads)

New Page 1

مسئلہ نمبر ۴۵۵ :۷ ربیع الآخر ۱۳۰۷ھ

کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ اگر امام یا منفرد تیسری یا چوتھی رکعت میں کچھ قرأت جہر سے پڑھ جائے تو سجدہ سہو واجب ہوگا یا نہیں؟ بینوا توجروا۔

الجواب

اگر امام اُن رکعتوں میں جن میں آہستہ پڑھنا واجب ہے جیسے ظہر و عصر کی سب رکعات اور عشاء کی پچھلی دو اور مغرب کی تیسری اتنا قرآن عظیم جس سے فرض قرأت ادا ہو سکے(اور وُہ ہمارے امام اعظم رضی اﷲ تعالٰی عنہ کے مذہب میں ایک آیت ہے) بھول کر بآواز پڑھ جائیگا تو بلاشبہ سجدہ سہو واجب ہوگا، اگر بلا عذرِشرعی سجدہ نہ کیا یا اس قدر قصداً بآواز پڑھا تو نماز کا پھیرنا واجب ہے،اور اگر اس مقدار سے کم مثلاً ایک آدھ کلمہ بآوازِ بلند نکل جائے تو مذاہب راجح میں کچھ حرج نہیں۔ ردالمحتار میں ہے۔الاسرار یجب علی الامام والمنفرد فیما یسرفیہ وھو صلٰوۃ الظھر والعصر و الثالثۃ من المغرب والاخریان من العشاء و صلاۃ الکسوف والاستسقاء کما فی البحر۲؎۔الخسری نمازوں میں امام منفرد دونوں پر اسرار(سراً قرأت) واجب ہے اور نماز ظہر ،عصر ،مغرب کی تیسری رکعت ،عشاء کی آخری دوکعت ،نمازکسو ف اور نماز استسقاء ہیں ۔جیسا کہ بحر میں ہے الخ(ت)

 (۲؎ ردالمحتار            باب صفۃ الصلوٰۃ        مطبوعہ مصطفی البابی مصر        ۱/ ۳۴۶)

دُر مختار میں ہے:تجب سجدتان بترک واجب سھواکالجھر فیما یخافت فیہ وعکسہ والاصح تقدیرہ بقدرما تجوز بہ الصلٰوۃ فی الفصلین ۱؎ اھ ملخصاًسہواً ترکِ واجب سے دو سجدے لازم آتے ہیں مثلاً سری نماز میں جہراً قرأت کرلے یا اسکا عکس ،اور اصح یہی ہے کہ دونوں صورتوں میں اتنی قرأت سے سجدہ لازم ہوجائے گا جس سے نماز ادا ہوجاتی ہو۔اھ ۔ملخصا۔(ت)

 (۱؎ دُرمختار            باب سجود السھو        مطبوعہ مجتبائی دہلی         ۱/ ۱۰۲)

غنّیہ میں ہے:الصحیح ظاہر الروایۃ وھوالتقدیر بما تجوز بہ الصلٰوۃ من غیر تفرقۃ لان القلیل من الجھر موضع المخافۃ عفوا۲؎ الخصحیح ظاہر الروایۃ میں ہے وہ اتنی مقدار ہے کہ اس کے ساتھ نماز بغیر کسی تفرقہ کے جائز ہوجائے کیونکہ سر کی جگہ جہر قلیل معاف ہے الخ(ت)

(۲؎ غنیۃ المستملی شرح منیۃ المصلی    فصل باب فی سجود السھو   مطبوعہ سہیل اکیڈمی لاہور     ص۴۵۸)

حاشیۃ شامی میں ہے:صححہ فی الھدایۃ والفتح والتبیین والمنیۃ ۳؎ الخ وتمامہ فیہ۔اس کو ہدایہ ،فتح، تبیین اورمنیہ میں صحیح کہا ہے الخ اور اس میں تفصیلی گفتگو ہے۔(ت)

(۳؎ ردالمحتار            باب سجود السہو            مطبوعہ مصطفی البابی مصر        ۱/ ۵۴۸)

تنویر الابصار میں ہے:فرض القرأۃ اٰیۃ علی المذھب ۴؎۔(مذہب مختار کے مطابق ایک آیت کی قرأت فرض ہے۔ت)

 (۴؎ درمختار            فصل یجہر الامام       مطبوعہ مجتبائی دہلی            ۱/ ۸۰)

بحرالرائق و عٰلمگیری میں ہے:لا یحب السجود فی االعمد و انما یجب الاعادۃ جبرا لنقصانہ ۵؎۔عمداً (ترک واجب سے) سجدہ سہو واجب نہیں کیونکہ اس کے نقصان کو پورا کرنے کے لئے نماز کا اعادہ ضروری ہے (ت)

(۵؎ فتاوٰی ہندیہ        الباب الثانی فی سجود السہو        مطبوعہ نورانی کتب خانہ پشاور        ۱/ ۱۲۶)

یہ حکم امام کا ہے اور منفرد کے لئے بھی زیادہ احتیاط اسی میں ہے کہ اس فعل سے عمداً بچے اور سہواً واقع ہو توسجدہ کرلے۔

وذلک لان العلماء اختلفوا فیہ اختلافا شدید افمنھم من لم یوجب علیہ الاسرار فیما یسر کما لا یحب علیہ الجھر فیما یجھر بالاتفاق و علیہ مشی فی الھدایۃ والمحیط والتتار خانیۃ و غیرھا ونص فی النھایۃ والکفایۃ والعنایۃ ومعراج الدرایۃ وغیرھا من شروح الھدایۃ والذخیرۃ وجامع الرموز شرح النقایۃوفی کتب اخر یطول عدھا انہ ھو ظاھر الروایۃ وان خلافہ روایۃ النوادر منھم من جعلہ فیما یسر کالامام والمنح والملتقی الا بحر والیہ اشارفی کنزالدقائق ونورالایضاح وصححہ فی البدائع والتبیین والفتح والدرر والھندیۃ وقال فی البحر والدر انہ المذھب یظھر کل ذلک بالمراجعۃ للبعض الی ردلمحتارو لبعض اخرالی ماسمینا من الاسفار فکان الاحوط ماقلنا واﷲ تعالٰی اعلم۔اور یہ اس لئے ہے کیونکہ اس میں علماء کا شدید اختلاف ہے بعض منفرد پر سری نماز میں سراً قرأت کو واجب قرار نہیں دیتے جیسا کہ جہری نماز میں بالاتفاق جہراً قرأت لازم نہیں، اور یہی ہدایہ،محیط اورتاتار خانیہ وغیرہا میں ہے۔ہدایہ کی شروح نہایہ،کفایہ ،عنایہ اورمعراج الداریہ وغیرہا اور ذخیرہ اور جامع الرموز شرح النقایہ اور دیگر کتب جن کا شمار طویل ہے میں  اسے ظاہر الروایۃ کہا ہے اور بعض نے سری نماز میں منفرد کو امام کی طرح قرار دیا ہے حلیہ،منیہ،بحر، نھر، منح اورملتقی الابحر میں اسی پر جزم ہے،کنزالدقائق اورنورالایضاح میں بھی اسی طرف اشارہ ہے۔بدائع ، تبیین، فتح،درر،اورہندیہ میں اسی کو صحیح قرار دیا گیاہے۔بحر اوردر میں ہے کہ مذہب یہی ہے۔اس مذکورہ گفتگو کا بعض حصہ ردالمحتار سے واضح ہے اور دوسراحصّہ دیگر معتبر کتب سے جن کا نام ہم نے ذکر کیا ہے پس احوط وہی ہے جو ہم نے بیان کیا واﷲ تعالٰی اعلم (ت)


Navigate through the articles
Previous article جو حافظ بہت تیز تلاوت کرے اس کے پیچھے نماز کیسی غلط قرآن پڑھنے والے کو امام بنانا کیسا ہے؟ Next article
Rating 2.70/5
Rating: 2.7/5 (291 votes)
The comments are owned by the poster. We aren't responsible for their content.
show bar
Quick Menu