• Qur'an

    In Qur'an section, we will upload translations of Qu'an in different languages. The best Urdu translation of Qur'an is "Kanzul Iman", Alhamdulillah it has been translated in many languages of the world. In this section you can also read online the great Tafaseer (Commentary) of Qu'ran, including TAFSEER-E-NAEEMI and others.

    more »

     
  • Hadith

    In Hadith section, you will be able to read online the different collections of Hadith, translation and commentary on Hadith (Sharha). We will try to upload upload Hadith with Urdu translations and Urdu Sharha of Hadiths, in scanned and unicode format, In Sha Allah.

    more »

     
  • Fiqh

    Fiqh section contains big collection of Fatawa written by Sunni Ulema (Scholars of Islam). Alhamdulillah most of the fatawa collections are brought online for the first time. You can find solution of any issue as per the guidance of Qur'an and Sunnah. It includes, Fatawa Ridawiyyah, Fatawa Amjadiyyah, Fatawa Mustafviyyah and a lot more.

    more »

     
  • Dedication

    This website is particularly dedicated to the Revivalist of Islam in the 14th century, i.e. Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi Alaihir Rahmah. We want to bring online the uttermost research work being carried out over his personality and works around the globe. For further details visit "Works on Alahazrat" Section

    more »

     
  • Books of Alahazrat

    Books written by Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi contain extensive research on various branches of Islamic arts & sciences. This website gives you an opportunity to explore this hidden treasure. You can dip into this sea of knowledge by visiting this section

    more »

     
  • Fatawa Ridawiyyah

    Fatawa Ridawiyyah is one of the greatest writtings of Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi. The new translated version of this historical Fatawa consists of 30 volumes and more than 21000 pages. Reading this fatawa with care and memorizing the principles mentioned therein, can take the reader to a big height in Islamic Jurisprudence.

    more »

     
  • Sunni Library

    - Sunni Library is a collection of core Islamic Literature. You can read online the great work and contribution of Sunni Islamic scholars worldwide in general and by the Scholars of Sub Continent in particular.

    more »

     
Login
Username:

Password:

Remember me



Lost Password?

Register now!
Main Menu
Themes

(2 themes)
Fiqh > Q. & Ans. > Jamaat / باجماعت نماز > امام کا فرش پر کھڑا ہونا افضل ہے یا محراب میں؟

امام کا فرش پر کھڑا ہونا افضل ہے یا محراب میں؟

Published by Admin2 on 2012/8/12 (1135 reads)

New Page 1

مسئلہ ۸۸۳: ازسنبھل ضلع مرادآباد   مرسلہ از سید محمد علی مدرس فارسی مدرسہ جارج مسلم اسکول

کیافرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں زید کہتاہے کہ مسجد کے فرش پرمحراب کے محاذ میں جماعت ہونا افضل ہے خواہ نمازی کم ہو، خواہ کسی درخت وغیرہ کے ہونے کی وجہ سے نمازیوں کی طبیعت پربارہو اور دلیل اس کی یہ ہے کہ شامی کے اندر یہ مضمون ظاہرکرتاہے کہ محراب میں امام کاکھڑاہونا افضل ہے اسی پرقیاس کرلیاجائے، عمریہ کہتاہے کہ تمام فرش مسجد کا ایک حکم میں ہے، کسی جگہ کے واسطے فضیلت نہیں ہوسکتی،اگر اس قدرنمازی ہوں کہ محراب سے راست وچَپ میں جماعت ممکن ہو اور نمازیوں کوبھی وہاں آسائش ہو تو ضرور جماعت کرلی جائے دوسرے یہ کہ ائمہ مجتہدین کے قیاسات کااختتام ہوگیا، علمائے حال کاقیاس کیاہوسکتاہے جبکہ علمائے حال کی یہ کیفیت ہے کہ لفظ کے لغوی معنی غلطی سے کچھ سے کچھ خیال کرتے ہیں لہٰذا مکلف خدمت ہوں کہ جواب مع دلیل تحریر فرمائیں، مکرر یہ کہ زیدمحراب کے محاذ میں جماعت ہونے کی فضیلت میں کوئی قول منقول پیش نہیں کرتا محض قیاس سے کام لیناچاہتاہے عمرقیاس کو رَد کرکے منقول دلیل مانگتاہے۔

الجواب

فی الواقع سنت متوارثہ یہی ہے کہ امام وسط مسجد میں کھڑا ہو اور صف اس طرح ہو کہ امام وسط صف میں رہے محراب کانشان اسی غرض کے لئے وسط مسجد میں بنایاجاتاہے اور اس میں ایک حکمت یہ بھی ہے کہ اگرامام ایک کنارے کی طرف جھکا ہواکھڑا ہو تو اگرجماعت زائد ہے فی الحال امام وسط صف میں نہ ہوگا اور ارشاد حدیث توسطوا الامام(امام کو درمیان میں کھڑا کرو۔ت) کاخلاف ہوگا اور اگر ابھی جماعت قلیل ہے توآئندہ ایسا ہونے کااندیشہ ہے لاجرم خود امام مذہب سیدامام اعظم رضی اﷲ تعالٰی عنہ کانص ہے کہ گوشہ میں کھڑا ہونا مکروہ ہے کنارہ مسجد میں کھڑاہونا مکروہ ہے کہ حدیث کاارشاد ہے امام کو وسط میں رکھو یہ طاق جسے اب عرف میں محراب کہتے ہیں حادث ہے زمانہ اقدس وزمانہ خلفائے راشدین رضی اﷲ تعالٰی عنہم اجمعین میں نہ تھا محراب حقیقی وہی صدرمقام اس کا مسجد میں قریب حدقبلہ ہے یہ محراب صوری اس کی علامت ہے جس مسجد کے دوحصے ہوں ایک مسقف دوسراصحن، جیسا کہ اب اکثرمساجد یوں ہی ہیں وہ دومسجدیں ہیں مسقف مسجد شتوی ہے یعنی جاڑوں کی مسجد اور صحن مسجد صیفی یعنی گرمیوں کی مسجد، ہرمسجد کے لئے وہ محراب حقیقی موجود ہے، اگرچہ محراب صوری صرف مسجد شتوی میں ہوتی ہے اعتبار اسی محراب حقیقی کاہے یہاں تک کہ اگرمحراب صوری وسط میں نہ ہو یاجانب مسجد بنادینے سے اب وسط میں نہ رہے توامام اس میں نہ کھڑا ہو بلکہ محراب حقیقی میں کہ وسط مسجد ہے، اور جب یہ حکم عام ہے جملہ مساجد کوشامل، اور صحن مسجد بھی ایک مسجد ہے تووہ بھی یقینا اس حکم منصوص میں خود داخل ہے نہ کہ یہاں کسی قیاس کی حاجت ہے، صحن مسجد میں جوجگہ قریب حد قبلہ وسط میں ہے وہ خود محراب حقیقی ہے خواہ محراب صوری کے محاذی ہو یانہ ہو یاسرے سے اس مسجد میں محراب صوری نہ بنی ہو اس محراب حقیقی میں امام کاکھڑاہونا سنت ہے بشرط جماعت اولٰی، لیکن جماعت ثانیہ کے لئے اسی مقام سے دہنے یابائیں ہٹ کرامامت کرنا، نافی کراہت ہے، معراج الدرایہ شرح ہدایہ میں ہے:

فی مبسوط بکر، السنۃ ان یقوم فی المحراب لیعتدل الطرفان ولوقام فی احدجانبی الصف یکرہ ولوکان المسجد الصیفی بجنب الشتوی وامتلأ المسجد یقوم الامام فی جانب الحائط لیستوی القوم من جانبیہ والاصح ماروی عن ابی حنیفۃ رضی اﷲ تعالٰی عنہ انہ قال اکرہ ان یقوم بین الساریتین اوفی زاویۃ اوفی ناحیۃ المسجد او الی ساریۃ لانہ خلاف عمل الامۃ قال صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم توسطوا الامام وسدوالخلل۱؎۔

مبسوط بکرمیں ہے امام کا محراب میں کھڑا ہونا سنت ہے تاکہ دونوں اطراف میں اعتدال ہو، اگر وہ صف کی کسی جانب کھڑا ہوا تو یہ مکروہ ہوگا، اگرمسجد صیفی جانب شتوی میں ہو اور مسجد بھرجائے توامام دیوار کی طرف کھڑا ہوتا کہ قوم دونوں اطراف میں برابر ہوجائے، اصح طور پر امام ا بوحنیفہ رضی اﷲ تعالٰی عنہ سے منقول ہے کہ انہوں نے فرمایا میں امام کے دوستونوں کے درمیان یاگوشہ مسجد یاکنارہ مسجد یاستون کی طرف کھڑے ہونے کو مکروہ جانتا ہوں کیونکہ یہ عمل امت کے مخالف ہے، حضوراکرم صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم کاارشاد گرامی ہے: امام کودرمیان میں کھڑاکرو اور صفوں کے خلا کو پُرکرو۔(ت)

 (۱؎ ردالمحتاربحوالہ معراج الدرایۃ    باب الامامۃ    مطبوعہ مصطفی البابی مصر    ۱ /۴۲۰)

اسی میں ہے:المحاریب مانصبت الا اوسط المساجد و ھی قدعینت لمقام الامام۲؎۔محراب نہیں بنائے جاتے مگر درمیان مسجد میں اور وہ مقام امام کومتعین کرتے ہیں۔(ت)

واﷲ تعالٰی اعلم۔

 (۲؎ ردالمحتاربحوالہ معراج الدرایۃ    باب الامامۃ    مطبوعہ مصطفی البابی مصر    ۱ /۴۲۰)


Navigate through the articles
Previous article اونچی آواز میں آمین کہنا کیادرست ہے؟ احتیاطا قربانی ایک روز لیٹ کرنے والے کے بارے حکم Next article
Rating 2.70/5
Rating: 2.7/5 (290 votes)
The comments are owned by the poster. We aren't responsible for their content.
show bar
Quick Menu