• Qur'an

    In Qur'an section, we will upload translations of Qu'an in different languages. The best Urdu translation of Qur'an is "Kanzul Iman", Alhamdulillah it has been translated in many languages of the world. In this section you can also read online the great Tafaseer (Commentary) of Qu'ran, including TAFSEER-E-NAEEMI and others.

    more »

     
  • Hadith

    In Hadith section, you will be able to read online the different collections of Hadith, translation and commentary on Hadith (Sharha). We will try to upload upload Hadith with Urdu translations and Urdu Sharha of Hadiths, in scanned and unicode format, In Sha Allah.

    more »

     
  • Fiqh

    Fiqh section contains big collection of Fatawa written by Sunni Ulema (Scholars of Islam). Alhamdulillah most of the fatawa collections are brought online for the first time. You can find solution of any issue as per the guidance of Qur'an and Sunnah. It includes, Fatawa Ridawiyyah, Fatawa Amjadiyyah, Fatawa Mustafviyyah and a lot more.

    more »

     
  • Dedication

    This website is particularly dedicated to the Revivalist of Islam in the 14th century, i.e. Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi Alaihir Rahmah. We want to bring online the uttermost research work being carried out over his personality and works around the globe. For further details visit "Works on Alahazrat" Section

    more »

     
  • Books of Alahazrat

    Books written by Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi contain extensive research on various branches of Islamic arts & sciences. This website gives you an opportunity to explore this hidden treasure. You can dip into this sea of knowledge by visiting this section

    more »

     
  • Fatawa Ridawiyyah

    Fatawa Ridawiyyah is one of the greatest writtings of Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi. The new translated version of this historical Fatawa consists of 30 volumes and more than 21000 pages. Reading this fatawa with care and memorizing the principles mentioned therein, can take the reader to a big height in Islamic Jurisprudence.

    more »

     
  • Sunni Library

    - Sunni Library is a collection of core Islamic Literature. You can read online the great work and contribution of Sunni Islamic scholars worldwide in general and by the Scholars of Sub Continent in particular.

    more »

     
Login
Username:

Password:

Remember me



Lost Password?

Register now!
Main Menu
Themes

(2 themes)
Fiqh > Q. & Ans. > Jamaat / باجماعت نماز > احتیاطا قربانی ایک روز لیٹ کرنے والے کے بارے حکم

احتیاطا قربانی ایک روز لیٹ کرنے والے کے بارے حکم

Published by Admin2 on 2012/8/12 (1766 reads)
Page:
(1) 2 »

New Page 1

مسئلہ ۸۸۵ تا ۸۹۰: ازکانپور    محلہ بوچڑخانہ    مولو ی نثار احمدصاحب    ۲۰/صفر ۱۳۳۷ھبسم اﷲ الرحمٰن الرحیم، حامدا ومصلیا ومسلما(اﷲ تعالٰی کی حمد اور حضور علیہ السلام کی خدمت میں صلوٰۃ وسلام عرض کرتے ہوئے۔ت)۔ حضرات علمائے کرام ادام اﷲ بقاء ہم علٰی رؤس المسلمین وحماہم۔ ان چندسوالوں کاجواب مرحمت فرمائیں:

(۱) یہ کہ اختلاف علماء ہو یوم النحر میں، توقربانی کواحتیاطاً ایک روز مؤخر کرانے والا اختلاف علماء سے بچنے کے لئے مجرم ہے یانہیں۔

(۲) سہ شنبہ ۱۰/ذی الحجہ کو عیدالاضحٰی کی نماز واجب کی نیت سے پڑھانے والا امامت سے بوجہ ثبوت شرعی ماننے کے اور چہارشنبہ کو اس جگہ حاضر ہوکر جہاں عیدالاضحٰی بوجہ ثبوت کامل نہ ہونے کے عید سہ شنبہ کو نہیں ہوئی تھی بلکہ آج چہارشنبہ کو عیدالاضحٰی تھی اور جماعت میں شریک ہوگیا، نفلی نیت سے مجرم ہوا یانہیں۔

(۳) سہ شنبہ کوامامت وخطبہ کے بعد احتیاطی جملہ کاتلفظ اور دوسرے روز اسی کاجماعت میں بہ نیت نفل شریک ہونا لوگوں کو شبہہ دلاتاہے کہ اس نے اپنی نماز دہرالی اور ہم لوگوں کی نمازیں خوب خراب کیں مگر امام کو دوشنبہ کو اعلان وقت نماز کے یقین تھا عید کا، اور راضی تھا، اور خود سہ شنبہ کو وہ ایک اعلان دینے پرراضی تھا کہ میں نے ثبوت کویقین جان کر بہ نیت واجب پڑھی اور امام ہوکر اقرارکرتاہے اصرار سے کہ واجب یقینی جان کرپڑھائی اوراحتیاطی جملہ میں بھی یہ عرض کیا کہ دینی بھائیو! آج عید ہے اور اکثرجگہ ہے، نماز بھی عید کی پڑھی گئی مگر قربانی کل کرنے میں احتیاط ہے، ایسی اختلافی حالت میں کس کے قول کو ماناجائے امام کے قول کو یامقتدیوں کے۔

(۴) پڑھی ہوئی نماز نفل کی نیت سے پھر پڑھنا حنفیوں کے نزدیک حدیث یزید ابن عامر رضی اﷲ تعالٰی عنہ جوباب ''من صلاۃ مرتین'' میں ہے، سے ثابت ہوتا ہے یانہیں۔

(۵) اس حدیث میں وان کنت قدصلیت (اگرچہ تونے نماز پڑھ لی ہو۔ت) میں ان وصلیہ ہے یا شرطیہ، اولٰی وصلیہ ہوتاہے یاشرطیہ۔

(۶) آیہ کریمہ ومن تطوع خیرا فھو خیرلہ (اور جو کوئی اپنی طرف سے نیکی زیادہ کرے تو وہ اس کے لئے بہترہے۔ت) اور من تطوع خیراً فان اﷲ شاکر علیم (جوکوئی اپنی طرف سے اچھائی کرے تو اﷲ تعالٰی نیکی کاصلہ دینے والا اور جاننے والا ہے۔ت) سے عبادات مالیہ اور بدنیہ جس میں نفلی نماز بھی داخل ہے کوئی ثابت کرے تو استدلال درست ہے یانہیں اور معطوف علیہ نہ ہونے کی وجہ سے تحریر میں بغیر واؤ کے لکھنے والا اور آیہ ثانیہ میں بغیر ف ترتیبیہ کے لکھنے والا غلطی کرنے والا ہے یانہیں۔ بینواتوجروا رحمکم اﷲ تعالٰی۔

الجواب

(۱) محل اختلاف علماء میں مراعات خلاف جہاں تک ارتکاب مکروہ کو مستلزم نہ ہو بالاجماع مستحب ہے، مستحب جرم نہیں ہوتا بلکہ اسے جرم کہنا جرم ہے،درمختار میں ہے:

یندب للخروج من الخلاف لاسیما للامام لکن بشرط عدم ارتکاب مکروہ مذھبہ۱؎۔اختلاف سے نکلنا مستحب ہے خصوصاً امام کے لئے، لیکن شرط یہ ہے کہ اپنے مذہب میں مکروہ کاارتکاب لازم نہ آئے(ت)

(۱؎ درمختار        کتاب الطہارۃ    مطبوعہ مطبع مجتبائی دہلی    ۱ /۲۷)

 (۲) جبکہ اس نے ثبوت شرعی پایا اورروزسہ شنبہ کوروزعید جان کر بہ نیت واجب نماز عید اداکی اور دوسرے جن کو ثبوت نہ پہنچنے کے باعث ان پر شرعاً آج عید واجب تھی ان کی جماعت جماعت روز اول تھی اور سہ شنبہ کے دن پڑھنے والے کے نزدیک اگرچہ جماعت روزدوم تھی مگرامام صالح امامت عید اور اس کے مقتدیوں نے کل ادا نہ کی تھی اور یہاں تاخیر بالعذر بالاجماع بلاکراہت جائز ہے، اور عدم تحقیق ثبوت عندہم سے بڑھ کر اور کیاعذرہوسکتاہے بہرحال یہ نماز امام وقوم اور اس کل پڑھنے والے سب کے نزدیک جماعت واجبہ تھی تو اس کا بہ نیت نفل اس میں مل جانا ہرگز جرم نہیں ہوسکتا جرم نہیں مگرمخالفت امراﷲ یہاں کون سے امراﷲ کاخلاف ہواام تقولون علی اﷲ مالاتعلمون ۲؎ (کیا تم اﷲ کے بارے میں ایسی بات کہتے ہو جسے تم نہیں جانتے۔ت)

(۲؎ القرآن        ۲ /۸۰)

ہاں اگر ایک دن نماز عید ہوکر دوسرے دن مطلقاً ناجائز ہوتی حتی کہ اس امام صالح امامت عید وقوم کوبھی جس نے کل بعذرنہ پڑھی تو البتہ اسے شریک ہونا جرم ہوتا اگرچہ ان پر جرم کیسا، وہ اپناادائے واجب کررہے تھے کہ ان کو کل کاثبوت نہ پہنچاتھا مگر اس کے اعتقاد میں توعید کل ہوچکی تھی آج دوسرادن تھا جس میں نماز ناجائز تھی تو یہ اپنے اعتقاد کی رو سے ایک ناجائز فعل میں شرکت کرتا اور مجرم ہوتافان المرء مواخذ بزعمہ (ہرآدمی کامواخذہ اس کے زعم واعتقاد پرہوگا۔ت)مگرایسا ہرگزنہیں بلکہ قطعاً جواز ہےکمانصوا علیہ قاطبۃ(جیسا کہ اس پر تمام فقہا نے نص کی ہے۔ت) تو ایک جماعت جائزہ میں متنفلا شریک ہونا کس نے منع کیا نماز عید، نمازجنازہ نہیں جس سے تنفل میں شرعاً عدم جواز کاحکم ثابت ہے، بدائع امام ملک العلماء میں ہے:لایصلی علی میت الامرۃ واحدۃ لاجماعۃ ولاوحدانا عندنا لنا ماروی ان النبی صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم صلی علی جنازۃ فلما فرغ جاء عمر رضی اﷲ تعالٰی عنہ ومعہ قوم فاراد ان یصلی ثانیا فقال لہ النبی صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم الصلٰوۃ علی الجنازۃ لاتعادوا لکن ادع للمیّت واستغفرلہ وھذا نص فی الباب (الٰی قولہ) دلیل علی عدم جواز التکرار۱؎۔ہمارے نزدیک میّت پرفقط ایک دفعہ نماز ادا کی جائے گی دوبارہ نہیں، نہ تنہا نہ جماعت کے ساتھ، کیونکہ منقول ہے کہ حضور صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم نے جنازہ پڑھایا جب فارغ ہوئے تو حضرت عمراور ان کے ساتھ کچھ لوگ آئے اورانہوں نے دوبارہ جنازہ پڑھنے کاارادہ کیا آپ صلی اﷲ علیہ وسلم نے فرمایا: جنازہ کی نماز لوٹائی نہیں جاسکتی البتہ میّت کے لئے دعا اور استغفار کرو، یہ اس باب میں نص ہے (یہاں تک ) یہ تکرار کے عدم جواز پردلیل ہے۔(ت)

 (۱؎ بدائع الصنائع    فصل فی صلوٰۃ الجنازہ    مطبوعہ ایچ ایم سعید کمپنی کراچی    ۱ /۳۱۱)

صلاۃ عید میں نہی کہاں، ہاں ثبوت بھی نہیں، پھر عدم ثبوت کو ثبوت عدم سے کیاعلاقہوھذا بحث لقد فرغنا عنہ فی الرد علی الوھابیۃ مراراً(یہ وہ بحث ہے جس کو ہم وہابیوں کے رد میں بارہا تفصیلاً بیان کرچکے ہیں۔ت) غایت یہ کہ بے طلب شرع بے وجہ ہے جبکہ کوئی عارض خاص نہ ہو مثلاً مرید یاتلمیذ یا ابن کے نزدیک کل ثبوت شرعی ہوگیا تھا پڑھ لی شیخ یااستاذ یا اب کے یہاں آج ملنے کو حاضر ہوا ان کے نزدیک آج عید ہے، یا نماز کوکھڑے ہوئے اب ان کی مخالفت اس امر میں کہ شرعاً ممنوع وحرام نہیں معیوب وقبیح ہے لہٰذا متنفلاً شریک ہوگیا تو یہ صورت بے وجہ بھی نہیں بلکہ بوجہ وجیہ ہے، امام مجتہد مطلق عالم قریش سیدنا امام شافعی رضی اﷲ تعالٰی عنہ نے تو جب مزارمبارک امام الائمہ سیدنا امام اعظم رضی اﷲ تعالٰی عنہ کے حضور نماز صبح پڑھائی دعائے قنوت نہ پڑھی نہ بسم اﷲ وآمین جہر سے کہی نہ غیرتحریمہ میں رفع یدین فرمایا علی مافی الروایات (جیسا کہ روایات میں ہے)

خود اپنا مذہب مجتہد نے ترک کیا اور عذر بھی بیان فرمایا کہ مجھے ان امام اجل سے شرم آئی کہ ان کے سامنے ان کا خلاف کروں

کما بیناہ فی حیاۃ الموات فی بیان سماع الاموات (جیسا کہ ہم نے ''حیات الموات فی بیان سماع الموات'' میں بیان کیا ہے۔ت)

 (۳) امام اپنے قلب سے نیت کرتاہے اور قلب غیب ہے اور زبان اس کاذریعہ بیان۔ ہرمسلم اپنے مافی الضمیر پرامین ہے جب تک ظاہر اس کا مکذب نہ ہو، رسول اﷲ صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم فرماتے ہیں:

افلا شققت عن قلبہ حتی تعلم اقالھا ام لا۱؎ رواہ مسلم۔کیاتونے اس کا دل چیرکردیکھا ہے حتی کہ تونے جان لیا کہ اس نے دل سے کہا یانہیں۔ اسے مسلم نے روایت کیا(ت) ۱؎

(۱؎صحیح مسلم    باب تحریم قتل الکافر بعد قول لاالٰہ الااﷲ        مطبوعہ نورمحمد اصح المطابع کراچی    ۱ /۶۸)

Page:
(1) 2 »

Navigate through the articles
Previous article امام کا فرش پر کھڑا ہونا افضل ہے یا محراب میں؟ فجر کی جماعت ہو رہی ہو تو پہلے سنت پڑھے یا نہیں؟ Next article
Rating 2.69/5
Rating: 2.7/5 (327 votes)
The comments are owned by the poster. We aren't responsible for their content.
show bar
Quick Menu