• Qur'an

    In Qur'an section, we will upload translations of Qu'an in different languages. The best Urdu translation of Qur'an is "Kanzul Iman", Alhamdulillah it has been translated in many languages of the world. In this section you can also read online the great Tafaseer (Commentary) of Qu'ran, including TAFSEER-E-NAEEMI and others.

    more »

     
  • Hadith

    In Hadith section, you will be able to read online the different collections of Hadith, translation and commentary on Hadith (Sharha). We will try to upload upload Hadith with Urdu translations and Urdu Sharha of Hadiths, in scanned and unicode format, In Sha Allah.

    more »

     
  • Fiqh

    Fiqh section contains big collection of Fatawa written by Sunni Ulema (Scholars of Islam). Alhamdulillah most of the fatawa collections are brought online for the first time. You can find solution of any issue as per the guidance of Qur'an and Sunnah. It includes, Fatawa Ridawiyyah, Fatawa Amjadiyyah, Fatawa Mustafviyyah and a lot more.

    more »

     
  • Dedication

    This website is particularly dedicated to the Revivalist of Islam in the 14th century, i.e. Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi Alaihir Rahmah. We want to bring online the uttermost research work being carried out over his personality and works around the globe. For further details visit "Works on Alahazrat" Section

    more »

     
  • Books of Alahazrat

    Books written by Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi contain extensive research on various branches of Islamic arts & sciences. This website gives you an opportunity to explore this hidden treasure. You can dip into this sea of knowledge by visiting this section

    more »

     
  • Fatawa Ridawiyyah

    Fatawa Ridawiyyah is one of the greatest writtings of Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi. The new translated version of this historical Fatawa consists of 30 volumes and more than 21000 pages. Reading this fatawa with care and memorizing the principles mentioned therein, can take the reader to a big height in Islamic Jurisprudence.

    more »

     
  • Sunni Library

    - Sunni Library is a collection of core Islamic Literature. You can read online the great work and contribution of Sunni Islamic scholars worldwide in general and by the Scholars of Sub Continent in particular.

    more »

     
Login
Username:

Password:

Remember me



Lost Password?

Register now!
Main Menu
Themes

(2 themes)
Fiqh > Q. & Ans. > Nawafil & Witr / وتر و نوافل > عشاء کے نوافل میں جماعت سے قرآن سننا کیسا ہے؟

عشاء کے نوافل میں جماعت سے قرآن سننا کیسا ہے؟

Published by Admin2 on 2012/8/30 (1185 reads)

New Page 1

مسئلہ ۱۰۴۳:  از مقام یومد قلعہ رام چھاؤنی ڈیرہ اسمعیل خاں رجمنٹ نمبر۸ بنگال ملک وزیرستان مرسلہ عبداﷲ خاں صاحب سوار    ۱۳صفر ۱۳۲۰ھ؂ اے لقائے توجواب ہرسوال مشکل   ازتوحل شود بے قیل وقال(آپ سے ملاقات بھی ہرسوال کاجواب ہے اور بغیر قیل وقال آپ سے سوال حل ہوجاتاہے)

بعد تمنا قدمبوسی کے مدعایہ ہے کہ یہاں ہم لوگوں میں ایک حافظ قرآن شریف بہت عمدہ تلاوت کرتے ہیں سب جوانوں کامشورہ ہواکہ حافظ صاحب ہم کو پوراقرآن سنائیں سب کی صلاح سے بعد نمازعشاء پچھلی دورکعت نفل میں دو پارے روزسنائے دس یوم بعد معلوم ہوا کہ نفلوں میں جماعت درست نہیں بعد کو سب کی رائے سے عشاء کے فرضوں میں دورکعت پیشتر میں قرآن سنایا ۸یوم سنا ہوگا کہ بعض نے کہا تمہاری نمازدرست نہ ہوئی اب آپ لکھئے کہ کسی طرح قرآن شریف علاوہ رمضان مبارک سنانا درست ہے یانہیں؟ اب سب کہتے ہیں وتروں میں سناؤ اور اب یہ بھی سناہے کہ سنتوں میں جماعت درست نہیں ہے پھر کیابندوبست کیاجائے؟ اور جونماز اس طورپرپڑھی ہے وہ قبول ہوئی یاپھر قضاکریں؟ یہ جگہ پہاڑ ہے ایک قلعہ ہے جس میں ہم قریب سَوجوانوں کے رہتے ہیں۔

الجواب

استسقاء کے سوا ہر نماز نفل و تراویح وکسوف کے سوا ہر نماز سنت میں ایسی جماعت جس میں چار یا زیادہ شخص مقتدی بنیں مکروہ ہے اور وتروں کی جماعت غیررمضان میں اگراتفاقاً کبھی ہوجائے توحرج نہیں مگر التزام کے ساتھ وہی حکم ہے کہ چاریازیادہ مقتدی ہوں توکراہت ہے اور فرضوں میں قرأت طویل قدرسنت سے اس قدرزائد کہ مقتدیوں میں سے کسی شخص پر بارگزرے سخت ناجائز وگناہ ہے یہاں تک کہ اگرہزار مقتدی ہیں اور سب خوشی سے راضی ہیں کہ قرأت قدر سنت سے زیادہ پڑھی جائے مگرایک شخص کوناگوار ہے تو اسی ایک کالحاظ واجب ہوگا اور قدرسنت سے بڑھاناگناہ ہوگا،

درمختارمیں ہے:یصلی بالناس من یملک اقامۃ الجمعۃ رکعتین کالنفل وصلوۃ الکسوف سنۃ واختار فی الاسرار وجوبھا واختلف فی استنان صلٰوۃ الاستسقاء۱؎ وھوبلاجماعۃ مسنونۃ بل ھی جائزۃ۲؎ اھ  ملتقطا۔وہ شخص جوجمعہ قائم کرسکتاہے لوگوں کومثل نفل کے دورکعات نمازپڑھاسکتاہے اور صلٰوۃ کسوف سنت ہے، اور اسرارمیں اس کے وجوب کو مختارکہاہے، نماز استسقاء کے سنت ہونے میں اختلاف ہے اوریہ بلاجماعت مسنون بلکہ جائز ہے اھ  تلخیصاً(ت)

 (۱؎ درمختار        باب الکسوف        مطبوعہ مطبع مجتبائی دہلی بھارت    ۱ /۱۸۔۱۱۷)

(۲؎ درمختار     باب الاستسقائ    مطبوعہ مطبع مجتبائی دہلی بھارت    ۱ /۱۱۸)

اُسی میں ہے:لایصلی الوتر ولاالتطوع بجماعۃ خارج رمضان ای یکرہ ذلک الوعلی سبیل التداعی بان یقتدی اربعۃ بواحد کمافی الدرر۳؎۔رمضان کے علاوہ وتر اور نوافل کو جماعت کے ساتھ ادانہ کیاجائے یعنی یہ عمل مکروہ ہے اگر علٰی سبیل التداعی ہو بایں طور کہ چارآدمی کسی ایک کی اقتداء کریں جیسا کہ دررمیں ہے(ت)

 (۳؎ درمختار        آخر باب الوتر والنوافل    مطبوعہ مطبع مجتبائی دہلی بھارت    ۱ /۹۹)

ردالمحتارمیں ہے :قولہ یکرہ ذلک اشار الی ماقالوا ان المراد من قول القدوری فی مختصرہ لایجوز، الکراھۃ لاعدم اصل الجواز لکن فی الخلاصۃ عن القدوری انہ لایکرہ وایدہ فی الحلیۃ بما اخرجہ الطحاوی عن المسور بن مخرمۃ قال دفنا ابابکر رضی اﷲ تعالٰی عنہ لیلا فقال عمر رضی اللہ تعالی عنہ انی لم اوتر فقام وصفنا ورائہ فصلی بنا ثلث رکعات لم یسلم الا فی اٰخرھن ثم قال و یمکن ان یقال الظاھر ان الجماعۃ فیہ غیرمستحبۃ، ثم ان کان ذلک احیانا کما فعل عمر رضی اﷲ تعالٰی عنہ کان مباحا غیرمکروہ، وان کان علی سبیل المواظبۃ کان بدعۃ مکروھۃ لانہ خلاف المتوارث وعلیہ یحمل ماذکرہ القدوری فی مختصرہ وماذکرہ فی غیرمختصرہ یحمل علی الاول ۱؎۔ واﷲ تعالٰی اعلم۔

ان کا قول ''یکرہ ذلک''علماء کے اس قول کی طرف اشارہ ہے جوانہوں نے فرمایا کہ قدوری کے اپنی مختصرمیں قول ''لایجوز''کامعنی یہ ہے کہ کراہت ہے نہ کہ اصل جواز معدوم ہے لیکن خلاصہ میں قدوری سے ہے کہ یہ مکروہ نہیں، اور اس کی تائید حلیہ میں اس روایت سے کی ہے جو طحاوی نے حضرت مِسْوَر بن مخرمہ رضی اﷲ تعالٰی عنہ سے روایت کی ہے کہ ہم نے سیدنا ابوبکرصدیق رضی اﷲ تعالٰی عنہ کورات کو دفن کیا تو حضرت عمر رضی اﷲ تعالٰی عنہ نے فرمایا : میں نے ابھی وترنہیں پڑھے، آپ کھڑے ہوئے تو ہم نے ان کے پیچھے صف بنالی تو انہوں نے ہمیں تین رکعات پڑھائیں اور ان کے آخر میں سلام پھیرا، پھر کہا کہ یہ کہنا ممکن ہے کہ ظاہریہی ہے کہ وتروں میں جماعت غیرمستحب ہے، اور اگریہ بعض اوقات ہو تو جیسا کہ حضرت عمررضی اﷲ تعالٰی عنہ نے کیا تو یہ مباح غیرمکروہ ہے، اور اگر اس میں دوام ہو تو یہ بدعت ومکروہ ہے کیونکہ منقول کے خلاف ہے اور مختصر قدوری میں جو مذکور ہے اسے بھی اسی پر محمول کیاجائے گا اور مختصرکے علاوہ میں جو مذکور ہے اسے پہلی صورت پرمحمول کیاجائے گا۔ واﷲ تعالٰی اعلم(ت)

 (۱؎ ردالمحتار        باب الوتر والنوافل    مطبوعہ ایچ ایم سعید کمپنی کراچی    ۲ /۴۸)

درمختارمیں ہے :یکرہ تحریما تطویل الصلٰوۃ علی القوم زائدا علی قدرالسنۃ۲؎الخ وتمام الکلام علیہ فی ردالمحتار والحلیۃ وغیرھما وبالبحث والتنقیر یظھر ماذکرنا۔نماز کامقتدیوں پرقدرِسنت سے زیادہ لمباکرنا مکروہ تحریمی ہے، الخ اس پرتفصیلی کلام ردالمحتار اور حلیہ وغیرہ میں موجود ہے اور بحث وتمحیص سے وہ ظاہر ہوگاجوہم نے ذکرکیاہے(ت)

 (۲؎ درمختار        باب الامامۃ        مطبوعہ مطبع مجتبائی دہلی بھارت    ۱ /۸۳)

پس اگر اس کا بندوبست منظور ہو تو اس کی تین صورتیں ہیں:

(۱) یہ کہ فرضوں کی دورکعت پیشیں میں قرأت ہو اس شرط پرکہ جماعت کے آدمی گنے بندھے ہوں اور وہ سب دل سے اس تطویل پرراضی ہوں کسی کو گراں نہ گزرے،ان اﷲ لایمل حتی تملوا۳؎ کما فی الصحیح عن رسول اﷲ صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم۔اﷲ تعالٰی ملال نہیں دیتا یہاں تک کہ تم ملال میں ہوجاؤ، جیسا کہ صحیح حدیث میں رسول اﷲصلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم کافرمان ہے(ت)

 (۳؎ سنن ابوداؤد    باب مایومربہ من القصد فی الصلٰوۃ    مطبوعہ آفتاب عالم پریس لاہور    ۱ /۱۹۴)

اگر یہ معدود لوگ راضی ہوں مگرجماعت میں یہی معین نہیں اور لوگ بھی آکرشریک ہوجاتے ہیں اور اُن کا اس تطویل پرراضی ہونا معلوم نہیں توجائز نہ ہوگاحذراعن الوقوع فی الحرام(حرام میں واقع ہونے سے بچنے کے لئے۔ت)

 (۲) سنتوں، نفلوں، وتروں میں حافظ قرأت کرے اور ہربار مختلف لوگ مقتدی ہوں کہ کسی بار میں تین سے زیادہ مقتدی نہ ہوں مثلاً عشاء کے بعد دوسنتوں مین تین مقتدیوں کے ساتھ آدھا پارہ پڑھ لیا پھروتروں میں دوسرے تین آدمی شریک ہوگئے آدھا ان میں پڑھا پھرنفلوں میں دوسرے تین مل گئے آدھا اب پڑھایاوتروں سے پہلے جتنے نفل چاہے امام نے مختلف تین تین آدمیوں کے ساتھ پڑھے کہ سَو یا زیادہ شخص سب کو حصہ رسد ایک قرأت طویل میں شرکت پہنچ گئی۔

 (۳) سنتوں خواہ نفلوں میں سب مقتدی ایک ساتھ شریک ہوکر ایک ہی بار میں ساری قرأت سب سنیں مگریوں کہ مقتدی سب یاتین سے جتنے زیادہ ہیں یوں منت مان لیں کہ میں نے اﷲ تعالٰی کے لئے نذر کی کہ یہ رکعتیں اس امام کے ساتھ باجماعت اداکروں اس صورت میں بھی کراہت نہ رہے گی اگرچہ کوئی ایسی پسندیدہ بات یہ بھی نہیں، درمختارمیں ہے :فی الاشباہ عن البزازیۃ یکرہ الاقتداء فی صلٰوۃ رغائب وبرائۃ وقدر الااذا قال نذرت کذا رکعۃ بھذا الامام جماعۃاھ قلت وتتمۃ عبارۃ البزازیۃ من الامامۃ ولاینبغی ان یتکلف کل ھذا التکلف لامر مکروہ۱؎اھ  ۔ واﷲ تعالٰی اعلم۔اشباہ میں بزازیہ کے حوالہ سے ہے کہ نماز رغائب اور برائۃ (شب برأت کی نماز) اور قدر(شبِ قدر کی نماز) میں اقتداء مکروہ ہے مگر اس صورت میں جب کوئی یوں کہے کہ میں نے اﷲ تعالٰی کے لئے نذر کی ہے کہ میں اس امام کی اقتداء میں یہ رکعتیں اداکروں گا اھ  قلت بزازیہکے باب الامامت میں اختتامی عبارت یوں ہے کہ اس امر مکروہ کے لئے یہ تمام تکلّفات مناسب نہیں اھ ۔ واﷲ تعالٰی اعلم۔(ت)

 (۱؎ درمختار        آخرباب الوتر والنوافل    مطبوعہ مطبع مجتبائی دہلی بھارت    ۱ /۹۹)


Navigate through the articles
Previous article تہجد والے کو وتر بعد فراغتِ تراویح پڑھنا جائزہے؟ وتر کے بعد کے نوافل بیٹھ کرپڑھنا بہترہے یاکھڑے Next article
Rating 2.72/5
Rating: 2.7/5 (288 votes)
The comments are owned by the poster. We aren't responsible for their content.
show bar
Quick Menu