• Qur'an

    In Qur'an section, we will upload translations of Qu'an in different languages. The best Urdu translation of Qur'an is "Kanzul Iman", Alhamdulillah it has been translated in many languages of the world. In this section you can also read online the great Tafaseer (Commentary) of Qu'ran, including TAFSEER-E-NAEEMI and others.

    more »

     
  • Hadith

    In Hadith section, you will be able to read online the different collections of Hadith, translation and commentary on Hadith (Sharha). We will try to upload upload Hadith with Urdu translations and Urdu Sharha of Hadiths, in scanned and unicode format, In Sha Allah.

    more »

     
  • Fiqh

    Fiqh section contains big collection of Fatawa written by Sunni Ulema (Scholars of Islam). Alhamdulillah most of the fatawa collections are brought online for the first time. You can find solution of any issue as per the guidance of Qur'an and Sunnah. It includes, Fatawa Ridawiyyah, Fatawa Amjadiyyah, Fatawa Mustafviyyah and a lot more.

    more »

     
  • Dedication

    This website is particularly dedicated to the Revivalist of Islam in the 14th century, i.e. Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi Alaihir Rahmah. We want to bring online the uttermost research work being carried out over his personality and works around the globe. For further details visit "Works on Alahazrat" Section

    more »

     
  • Books of Alahazrat

    Books written by Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi contain extensive research on various branches of Islamic arts & sciences. This website gives you an opportunity to explore this hidden treasure. You can dip into this sea of knowledge by visiting this section

    more »

     
  • Fatawa Ridawiyyah

    Fatawa Ridawiyyah is one of the greatest writtings of Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi. The new translated version of this historical Fatawa consists of 30 volumes and more than 21000 pages. Reading this fatawa with care and memorizing the principles mentioned therein, can take the reader to a big height in Islamic Jurisprudence.

    more »

     
  • Sunni Library

    - Sunni Library is a collection of core Islamic Literature. You can read online the great work and contribution of Sunni Islamic scholars worldwide in general and by the Scholars of Sub Continent in particular.

    more »

     
Login
Username:

Password:

Remember me



Lost Password?

Register now!
Main Menu
Themes

(2 themes)
Fiqh > Q. & Ans. > Namaz Tarweeh / نماز تراویح > نابالغ کے پیچھے نماز تراویح جائز ہے یا نہیں؟

نابالغ کے پیچھے نماز تراویح جائز ہے یا نہیں؟

Published by Admin2 on 2012/9/14 (1225 reads)

New Page 1

مسئلہ ۱۰۶۱: ازپیلی بھیت مدرسہ پنجابیاں مرسلہ حافظ محمداحسان صاحب ۱۰/رمضان المبارک۱۳۱۰ھ

کیافرماتے ہیں علمائے دین ومفتیان شرع متین اس مسئلہ میں کہ نابالغ کے پیچھے نمازتراویح جائزیاناجائز اور جس حافظ کاسن چودہ سال کا ہو وہ بلوغ میں داخل ہے یاخارج؟ اور شرعاً حد بلوغ کی ابتداء ازروئے سن کےَ سال سے معتبرہے؟ بیّنواتوجروا

الجواب

مسئلہ میں اختلاف مشائخ اگرچہ بکثرت ہے مگراصح وارجح واقوی یہی کہ بالغوں کی کوئی نمازاگرچہ نفل مطلق ہو نابالغ کے پیچھے صحیح نہیں۔

ہدایہ میں ہے :المختار انہ لایجوز فی الصلوات کلھا۳؎۔مختاریہی ہے کہ تمام نمازوں میں جائزنہیں۔(ت)

 (۳؎ الہدایہ                باب الامامت        مطبوعہ مکتبہ عربیہ کراچی    ۱ /۱۰۳)

بحرالرائق میں ہے :وھو قول العامۃ کمافی المحیط وھوظاھر الروایۃ۱؎۔اکثرعلماء کایہی قول ہے اور یہی ظاہرروایت ہے۔(ت)

 (۱؎ بحرالرائق        باب الامامت    مطبوعہ ایچ ایم سعید کمپنی کراچی    ۱ /۳۵۹)

اور اقل مدت بلوغ پسرکے لئے بارہ سال اور زیادہ سے زیادہ سب کے لئے پندرہ برس ہے اگر اس تین سال میں اثر بلوغ یعنی انزالِ منی خواب خواہ بیداری میں واقع ہو فبہا ورنہ بعد تمامی پندرہ سال کے شرعاً بالغ ٹھہرجائے گا اگرچہ اثراصلاً ظاہرنہ ہو،فی التنویر بلوغ الغلام بلانزال فان لم یوجدفیھا شیئ منھا فحتی یتم خمس عشرۃ سنۃ بہ یفتی وادنی مدتہ لہ اثتن عشرۃ سنۃ ھوالمختار ملخصا۲؎۔تنویرمیں ہے لڑکااحتلام سے بالغ ہوجاتاہے اگر احتلام نہ ہو تو پندرہ سال کی عمر میں بالغ ہوگا، اسی پرفتوٰی ہے، کم از کم مدت بارہ سال ہے، یہی مختارہے۱ھ ملخصا(ت)

 (۲؎ درمختار        فصل بلوغ الغلام    مطبوعہ مطبع مجتبائی دہلی        ۳ /۱۹۹)

پسر چاردہ سالہ کابالغ ہونا اگرمعلوم ہو(اگرچہ یونہی کہ وہ خود اپنی زبان سے اپنابالغ ہوجانا اور انزال منی واقع ہونا بیان کرتاہے اور اس کی ظاہرصورت وحالت اس بیان کی تکذیب نہ کرتی ہو) تووہ بالغ ماناجائے گا ورنہ نہیں۔فی الدر المختار فان راھقا بان بلغا ھذا السن فقالا بلغنا صدقا ان لم یکذبھما الظاھر کذا قیدہ فی العمادیۃ وغیرھا فبعد سنتی عشرۃ سنۃ یشترط شرطا اخر لصحۃ اقرارہ بالبلوغ وھو ان یکون بحال یحتلم مثلہ والا لایقبل قولہ شرح وھبانیۃ وھما حینئذ کبالغ حکما فلایقبل جحودہ البلوغ بعد اقرارہ مع احتمال حالہ۳؎الخ۔ واﷲ سبحانہ وتعالٰی اعلم۔درمختارمیں ہے اگروہ اس عمر کو پہنچے کہ قریب البلوغ ہیں اور دعوٰی کرتے ہیں کہ ہم بالغ ہیں تو ظاہراً کوئی بات ان کی تکذیب نہ کرتی ہو تو ان کی تصدیق کی جائے گی، اسی طرح عمادیہ وغیرہ میں اسے مقیدکیاگیا ہے اور بارہ سال کے بعد صحت اقرار بلوغ کے لئے ایک اور شرط لگائی گئی ہے کہ اسی طرح کے لڑکوں کو احتلام ہوتا ہو ورنہ ان کادعوٰی قول نہ ہوگا شرح وہبانیہ، اور اب وہ دونوں بالغ کے حکم میں ہوں گے احتمال کی وجہ سے اقرار کے بعدان کاانکار بلوغ قابل قبول نہ ہوگا۔ واﷲ تعالٰی اعلم(ت)

 (۳؎ درمختار        فصل بلوغ الغلام    مطبوعہ مطبع مجتبائی دہلی        ۳ /۱۹۹)


Navigate through the articles
Previous article ایک سلام سے دس رکعت تراویح پڑھانا کیسا وہابی کا بیس رکعت تراویح کی بجائے گیارہ پڑھنا کیسا Next article
Rating 2.90/5
Rating: 2.9/5 (261 votes)
The comments are owned by the poster. We aren't responsible for their content.
show bar
Quick Menu