• Qur'an

    In Qur'an section, we will upload translations of Qu'an in different languages. The best Urdu translation of Qur'an is "Kanzul Iman", Alhamdulillah it has been translated in many languages of the world. In this section you can also read online the great Tafaseer (Commentary) of Qu'ran, including TAFSEER-E-NAEEMI and others.

    more »

     
  • Hadith

    In Hadith section, you will be able to read online the different collections of Hadith, translation and commentary on Hadith (Sharha). We will try to upload upload Hadith with Urdu translations and Urdu Sharha of Hadiths, in scanned and unicode format, In Sha Allah.

    more »

     
  • Fiqh

    Fiqh section contains big collection of Fatawa written by Sunni Ulema (Scholars of Islam). Alhamdulillah most of the fatawa collections are brought online for the first time. You can find solution of any issue as per the guidance of Qur'an and Sunnah. It includes, Fatawa Ridawiyyah, Fatawa Amjadiyyah, Fatawa Mustafviyyah and a lot more.

    more »

     
  • Dedication

    This website is particularly dedicated to the Revivalist of Islam in the 14th century, i.e. Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi Alaihir Rahmah. We want to bring online the uttermost research work being carried out over his personality and works around the globe. For further details visit "Works on Alahazrat" Section

    more »

     
  • Books of Alahazrat

    Books written by Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi contain extensive research on various branches of Islamic arts & sciences. This website gives you an opportunity to explore this hidden treasure. You can dip into this sea of knowledge by visiting this section

    more »

     
  • Fatawa Ridawiyyah

    Fatawa Ridawiyyah is one of the greatest writtings of Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi. The new translated version of this historical Fatawa consists of 30 volumes and more than 21000 pages. Reading this fatawa with care and memorizing the principles mentioned therein, can take the reader to a big height in Islamic Jurisprudence.

    more »

     
  • Sunni Library

    - Sunni Library is a collection of core Islamic Literature. You can read online the great work and contribution of Sunni Islamic scholars worldwide in general and by the Scholars of Sub Continent in particular.

    more »

     
Login
Username:

Password:

Remember me



Lost Password?

Register now!
Main Menu
Themes

(2 themes)
Fiqh > Q. & Ans. > Jamaat / باجماعت نماز > قنوت نازلہ کا کیا حکم ہے؟

قنوت نازلہ کا کیا حکم ہے؟

Published by Admin2 on 2012/10/17 (1694 reads)
Page:
(1) 2 »

مسئلہ ۱۱۰۶ : ازدمن قریب سورت بخدمت جناب مولیٰنا مولوی محمد وصی احمدصاحب محدث سورتی (رحمہ اﷲ تعالٰی) وازانجا بفرض تحقیق نزدفقیر ۱۶ربیع الاول شریف ۱۳۱۶ھ

کیافرماتے ہیں علمائے دین ومفتیان شرع متین اس مسئلہ میں کہ دعائے قنوت کا کس مصیبت کے نازل ہونے کے وقت فرض پنجگانہ میںپڑھنا یاخاص کسی وقت کے فرض نماز میں پڑھنا شرع شریف سے ثابت ہے یانہیں؟ خاص کرایام وبائے طاعون میں اور اس کے پڑھنے کامحل فرض کی آخری رکعت میں قبل رکوع کے یاقومہ میں امام اور مقتدی دونوں پڑھیں یاصرف امام بآوازبلندپڑھے اور مقتدی آمین آہستہ آہستہ کہیں بینواتوجروا۔

الجواب

بسم اﷲ الرحمٰن الرحیمo اللھم لک الحمد(اے اﷲ! تیرے لئے حمد ہے۔ت) عامہ بلکہ عام متون مذہب میں دربارہ وترارشاد ہوا:لایقنت فی غیرہ وکذا صرحوا ان الما موم لایتبع امامہ القانت فی الفجر وعللوہ بانہ منسوخ وانہ محدث۱؎۔غیروتر میں قنوت نہ پڑھے جیسا کہ فقہاء کرام نے تصریح فرمائی ہے کہ مقتدی اس امام کی جو فجر میں قنوت پڑھتاہے پیروی اس معاملہ میں نہ کریں، اور انہوں نے وجہ یہ بتائی ہے کہ یہ منسوخ ہے لہٰذا یہ نئی چیزہے۔(ت)

 (۱؎ درمختار        باب الوتر والنوافل    مطبوعہ مطبع مجتبائی دہلی    ۱/ ۹۴)

اور محققین شراح مثل امام ابن الہام و علامہ سروجی و امام عینی شارحین ہدایہ و علامہ شمنی شارح نقایہ و علامہ ابراہیم حلبی شارح منیہ و علامہ زین بن نجیم شارح کنز و علامہ شرنبلالی شارح نورالایضاح و علامہ علائی شارح تنویر و علامہ سیدحموی شارح اشباہ وعلامہ نوح آفندی و علامہ سیدابوالسعود ازہری محشی کنز و علامہ سید محمدشامی محشیان درر وغیرہ بہ تبعیت امام اجل حافظ الحدیث ابوجعفر طحاوی ہنگام نزول مثل طاعون وغیرہ (والعیاذباﷲ تعالٰی) صرف نماز فجرمیں تجویز قنوت کی تنقیح وتنقید اور اطلاق متون کی اس سے تقیید فرماتے ہیں ۔ غنیہ المستملی و مراقی الفلاح وغیرہما میں ہے :وھو مذھبنا وعلیہ الجمہور۲؎۱ھ وقدصح بہ الحدیث فی الصحیحین وغیرھما عن انس وابی ھریرۃ وغیرھما رضی اﷲ تعالٰی عنھم قالوا وھو محمل ماروی من قنوت امراء المؤمنین الصدیق و الفاروق والمرتضٰی ومعٰویۃ وغیرھم رضوان اﷲ تعالٰی علیھم، قلت ولیست المسئلۃ مماتجری فیہ المماکسۃ۔یہی ہمارامذہب ہے اور جمہوربھی اس کے قائل ہیں۱ھ اور اس بارے میں صحیح حدیث بخاری اور مسلم وغیرہما میں موجودہے اور وہ حضرت انس اور ابوہریرہ رضی اﷲ تعالٰی عنہما سے مروی ہے اور حضرت امیرالمومنین صدیق اکبر، عمرفاروق، علی مرتضٰیاور امیرمعاویہ وغیرہم رضی اﷲ عنہم کاقنوت کے بارے میں عمل اس حدیث کے مطابق تھا، میں کہتاہوں یہ وہ مسئلہ نہیں جس میں کھنچاؤپایاجائے۔(ت)

 (۲؎ غنیہ المستملی    صلٰوۃ الوتر        مطبوعہ سہیل اکیڈمی لاہور    ص۴۲۰)

پھربرتقدیرقنوت بلاشبہہ سبیل وہی ہے جو فاضل مجیب سلمہ المجیب نے اختیارفرمائی کہ امام ومقتدی سب آہستہ پڑھیں۔

اقول وماوقع من الخلف بین ایمتنا الکرام ومشائخنا الاعلام فی قنوت الوترھل یجھرہ ام یسروھو المختار، کمافی الھدایۃ وھوالاصح، کمافی المحیط والصحیح، کما فی شرح الجامع الصغیر لقاضی خاں وھل یؤمن الماموم ام یقنت وھو السحیح المختار، کمافی المحیط والشرح المذکور وغیرھما فانما منشؤہ ان لقنوت الوتراللھم انا نستعینک الخ شبھۃ القراٰن علی ماذکروہ فکما یجھر الامام بالقراٰن فکذا بما فیہ شبھتہ وکما لایقرؤالموتم القراٰن فکذا مالہ شبھتہ کماقررہ فی الحلیۃ و الغنیۃ والبحر وغیرھا ولاکذالک قنوت النوازل وانما ھو دعاء محض فیشترک فیہ الامام و الماموم ویخفیانہ کسائر دعیۃ فانہ ھوالمندوب الیہ فی الدعاء۔اقول ہمارے ائمہ کرام سے متاخرین اور ہمارے مشائخ عظام نے وتر کی قنوت کے بارے بحث میں جو فرمایا کہ یہ قنوت جہر پڑھی جائے یاآہستہ، توآہستہ پڑھناہی مختارہے جیسا کہ ہدایہ میں ہے اور یہی اصح ہے ، جیسا کہ قاضی خاں کی شرح جامع صغیرمیں ہے۔ اور یہ کہ کیامقتدی صرف آمین کہیں یاوہ بھی قنوت پڑھیں، تو ان کا قنوت پڑھناصحیح ومختارہے جیسا کہ محیط اور مذکورشرح وغیرہما میں ہے۔ اور اس بات کی وجہ یہ ہے کہ قنوت وتر جو کہ اللھم انانستعینک الخ ہے کی قرآن سے مشابہت ہے جیسا کہ فقہاء نے بیان کیاہے لہٰذا جس طرح قرآن کاجہر کرتاہے اسی طرح قرآن کے مشابہ چیز کا بھی امام جہرکر ے اور جس طرح مقتدی قرآن کی قرأت نہیں کرتا اسی طرح قرآن کی مشابہت والی چیز کی بھی مقتدی قرأت نہ کرے جیسا کہ حلیہ، غنیہ، بحر وغیرہا میں تقریر کی گئی ہے

جبکہ قنوت نوازل کایہ مقام نہیں ہے وہ تو محض دعا ہے جس میںامام اور مقتدی مساوی شریک ہیں لہٰذا دونوں اس کو آہستہ پڑھیں گے، جس طرح تمام دعاؤں میں مستحب یہ ہے کہ آہستہ پڑھاجائے۔(ت)

مگراخفاء واجب نہیں کہ جہرگناہ ہو،وقد صرحوابانہ اذا جھر سھوا بشیئ من الادعیۃ والاثنیۃ لایجب علیہ السجود ۱؎ کمافی ردالمحتار ولووجب لوجب کمالایخفی۔جبکہ فقہاء نے تصریح کی ہے اگرکوئی شخص بھول کر کوئی دعاوثناء جہر سے پڑھے توسجدہ سہو واجب نہ ہوگا جیسا کہ ردالمحتارمیں ہے اور اگرقنوت نازلہ یادعا کااخفاء واجب ہوتا تو اس کے جہر سے سجدہ سہوواجب ہوتا جیسا کہ واضح ہے۔(ت)

 (۱؂ ردالمحتار         باب سجود السحو     مطبوعہ ایچ ایم سعید کمپنی کراچی       ۲/ ۸۲)

پھراگرامام جہرکرے توبنظرحشمت امامت مقتدیوں کااس کی دعاپر آہستہ آمین کہناہی اس سے جدااپنی اپنی متفرق دعامیں مشغول ہونے سے اولٰی ہےکما استظھرہ العلامۃ الشامی (جیسا کہ علامہ شامی نے اس کوظاہرقراردیا ہے۔ت) رہایہ کہ قول بقنوت نازلہ پر اس کامحل قبل رکوع ہے یابعد۔ مشائخ مذہب وعلمائے متقدمین سے اس باب میں کوئی قول منقول نہیں متاخرین شراح کی نظرمختلف ہوئی ، علامہ شرنبلالی کے کلام سے بعد رکوع ہوناظاہر، علامہ شامی نے اسی کواظہرکہا، علامہ سیدحموی نے فرمایا: قبل رکوع چاہئے، علامہ ازہری نے اسے مقرررکھا۔ علامہ طحاوی نے فرمایا: مقتضائے نظرتخییر ہے چاہے قبل پڑھے یابعد۔ شرح نورالایضاح میں ہے:قال الامام ابوجعفر الطحاوی رحمہ اﷲ تعالٰی انما لایقنت عندنا فی الفجر من غیر بلیۃ فان وقعت فتنۃ اوبلیۃ فلاباس بہ فعلہ رسول اﷲ صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم ای بعد الرکوع کما تقدم۲؎۔امام ابوجعفر طحاوی نے فرمایا ہے کہ ہمارے نزدیک کسی مصیبت وبلاء کے نزول کے بغیرفجر کی نمازمیں قنوت نازلہ نہ پڑھی جائے، اور اگر کوئی فنہ یابلاء واقع ہوتی ہو توپھرکوئی حرج نہیں، کیونکہ رسول اﷲ صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم نے ایساکیا ہے یعنی رکوع کے بعد پڑھے جیسا کہ پہلے گزرا ہے(ت)

 (۲؎حاشیۃ الطحطاوی علی مراقی الفلاح    باب الوتر  مطبوعہ نورمحمد کارخانہ تجارت کتب کراچی   ص ۲۰۶۷)

Page:
(1) 2 »

Navigate through the articles
Previous article آخری رکعت میں بعدرکوع دعامانگنا,آمین کہنا کیسا دفع وبا کے لئے فجر میں قنوت نازلہ کا حکم Next article
Rating 2.87/5
Rating: 2.9/5 (314 votes)
The comments are owned by the poster. We aren't responsible for their content.
show bar
Quick Menu