• Qur'an

    In Qur'an section, we will upload translations of Qu'an in different languages. The best Urdu translation of Qur'an is "Kanzul Iman", Alhamdulillah it has been translated in many languages of the world. In this section you can also read online the great Tafaseer (Commentary) of Qu'ran, including TAFSEER-E-NAEEMI and others.

    more »

     
  • Hadith

    In Hadith section, you will be able to read online the different collections of Hadith, translation and commentary on Hadith (Sharha). We will try to upload upload Hadith with Urdu translations and Urdu Sharha of Hadiths, in scanned and unicode format, In Sha Allah.

    more »

     
  • Fiqh

    Fiqh section contains big collection of Fatawa written by Sunni Ulema (Scholars of Islam). Alhamdulillah most of the fatawa collections are brought online for the first time. You can find solution of any issue as per the guidance of Qur'an and Sunnah. It includes, Fatawa Ridawiyyah, Fatawa Amjadiyyah, Fatawa Mustafviyyah and a lot more.

    more »

     
  • Dedication

    This website is particularly dedicated to the Revivalist of Islam in the 14th century, i.e. Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi Alaihir Rahmah. We want to bring online the uttermost research work being carried out over his personality and works around the globe. For further details visit "Works on Alahazrat" Section

    more »

     
  • Books of Alahazrat

    Books written by Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi contain extensive research on various branches of Islamic arts & sciences. This website gives you an opportunity to explore this hidden treasure. You can dip into this sea of knowledge by visiting this section

    more »

     
  • Fatawa Ridawiyyah

    Fatawa Ridawiyyah is one of the greatest writtings of Alahazrat Imam Ahmad Raza Khan Bareilvi. The new translated version of this historical Fatawa consists of 30 volumes and more than 21000 pages. Reading this fatawa with care and memorizing the principles mentioned therein, can take the reader to a big height in Islamic Jurisprudence.

    more »

     
  • Sunni Library

    - Sunni Library is a collection of core Islamic Literature. You can read online the great work and contribution of Sunni Islamic scholars worldwide in general and by the Scholars of Sub Continent in particular.

    more »

     
Login
Username:

Password:

Remember me



Lost Password?

Register now!
Main Menu
Themes

(2 themes)
Fiqh > Q. & Ans. > Masjid / Waqf / مسجد، وقف > مسجد کے پھلدار درخت سے پھل کھانا کیسا ہے؟

مسجد کے پھلدار درخت سے پھل کھانا کیسا ہے؟

Published by Admin2 on 2012/11/14 (1104 reads)

مسئلہ ۱۱۶۷: از بریلی شہر کہنہ مسئولہ محمد ظہور صاحب ۱۰ شوال ۱۳۳۷ھ

کیا فرماتے ہیں اس مسئلہ میں کہ مسجد میں درخت پھلدار مثلاً جامن مولسری کھنی وغیرہ کے ہو اور پھل اس مقدار پر آیاجس کو فروخت کیا جائے ، ایسی صورت میں وہ پھل نمازی یا غیر نمازی بلا کچھ قیمت ادا کئے ہوئے کھا سکتے ہیں یا نہیں؟ دیگر یہ کہ مسجد میں درخت بیلہ۔ چنبیلی۔ مولسری کا ہےاس کے پھول نمازی لوگ بلا کوئی قیمت ادا کئے ہوئے گھر کو لاسکتے ہیں یا نہیں ؟

الجواب: مسجد میں بے ضرورت شدید درخت بونا منع ہے اور اس کے پھل پُھول بے قیمت نہیں لے سکتے۔ ہندیہ میں ہے:اذاغرس شجرا فی المسجد فالشجر للمسجد کذافی الظھیر یہ۱؎۔

جب کسی نے مسجد میں پودا لگایا تو وہ مسجد ہی کا ہوگا ، جیسا کہ ظہیریہ میں ہے۔ (ت)

(۱؎ فتاوٰی ہندیۃ    کتاب الوقف    الباب الثانی عشرفی الرباطات    مطبوعہ نورانی کتب خانہ پشاور    ۲ /۴۷۴)

اسی میں ہے:فی فتاوٰی اھل سمر قند مسجد فیہ شجرۃ تفاح یباح للقوم ان یفطر وابھذا التفاح قال الصدر الشھید رحمہ اﷲ تعالٰی المختار انہ لایباح کذافی الذخیرۃ ۲؎ اھ

فتاوٰی اہل سمر قند میں ہے: ایک مسجد میں ناشپاتی کا درخت ہے لوگوں کا اسکی ناشپاتی کے ساتھ روزہ افطار کرنا مباح ہے، صدرالشہید کہتے ہیں کہ مختاریہ  ہے کہ یہ جائز نہیں ، جیسا کہ ذخیرہ میں ہے اھ

(۲؎ فتاوٰی ہندیۃ    کتاب الوقف    الباب الثانی عشرفی الرباطات    مطبوعہ نورانی کتب خانہ پشاور    ۲ /۴۷۴)

اقول:  وھذاتصحیح صریح من امام جلیل ولا شک انہ ھو قضیۃ الوقفیۃ فان الوقف کما لا یملک لا یباح فیقدم علی مافی صلح الخانیۃ قبیل فصل المھاباۃ۔ طریق غرس فیہ رجل شجرۃ الفرصاد قالو ا لاباس بہ اذاکان لا یضر بالطریق ویطیب للغارس ورقھا واکل فرصا دھا وان کانت الشجرۃ فی المسجد قال الفقیہ ابو جعفر رحمۃ اﷲ تعالٰی لا باس باکل توتھا ولایجوز اخذ ورقھا۱؎  اھ واﷲ تعالٰی اعلم

اقول: (میں کہتا ہوں) یہ ایک عظیم امام کی صراحۃً تصحیح ہے اور بلاشبہ یہ معا ملہ وقف سے متعلق ہے اور وقف جس طرح کسی کی ملکیت نہیں ہوتا اسی طرح وہ کسی کے لئے مباح نہیں ہوتا۔ اور جو کچھ خانیہ میں مہابات کی فصل سے تھوڑا سا پہلے ہے اس پر اس قول کو تقدیم حاصل ہے کہ راستہ میں ایک شخص نے تُوت کا درخت لگادیا تو فقہاء نے فرمایا: جب وہ راستہ کے لئے ضرر ساں نہ ہو تو اس میں کوئی حرج نہیں اور درخت لگانے والے کے لئےاس کے پتّے اور پھل کا استعمال مباح ہوگا اور اگر درخت مسجد میں ہے تو فقیہ ابو جعفر رحمۃ اﷲ تعالٰی علیہ نے فرمایا : اسے اپنے توت کا پھل کھانا جائز اور پتّوں کا لینا ناجائز ہے۔ واﷲ تعالٰی اعلم

 ( ۱؎فتاوٰی قاضی خاں    کتاب الصلح فیما یجوز لاحدالشریکین    مطبوعہ نو لکشور لکھنؤ    ۳ /۶۱۱)


Navigate through the articles
Previous article مسجد کی دیواروں پر عربی تحریروں کا حکم مسجد میں دنیا کی باتیں کرنے والوں کا حکم Next article
Rating 2.67/5
Rating: 2.7/5 (261 votes)
The comments are owned by the poster. We aren't responsible for their content.
show bar
Quick Menu